عام انتخابات: جہلم سے امیدواروں کے تائید کنندگان اور تجویز کنندگان گرفتار

جہلم: عام انتخابات سے قبل سیاسی رہنماؤں کی پکڑ دھکڑ کا سلسلہ جاری، سابق وفاقی وزیر فواد چوہدری اور ان کے کزن فوق شیرباز کے جہلم میں تمام تائید کندگان اور تجویز کندگان کو غیرقانونی طور پر گھروں سے اغواء کرکے نامعلوم مقام پر منتقل کر دیا گیا۔

سینئر صحافی اعزاز سید نے ایکس (سابقہ ٹویٹر) پر اپنی پوسٹ میں بتایا کہ فواد چوہدری اور ان کے کزن فوق شیرباز کے تمام تائید کندگان اور تجویز کندگان کو گھروں سے اٹھا کر نامعلوم مقام پر منتقل کر دیا گیا ہے ۔اٹھائے جانے والوں میں چوہدری صابر حسین، نعمان اظہر اورچوہدری مظہر گوندل شامل ہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ انتخابات سے قبل اس طرح کی کارروائیاں پوری دنیا میں پاکستان کا مذاق اڑوا رہی ہیں، نجانے ہمارے فیصلہ ساز کب سبق سیکھیں گے؟

ادھر فواد چوہدری کے بھائی فیصل چوہدری نے ایکس (سابقہ ٹویٹر) پر اپنی پوسٹ میں کہا کہ خوف کا عالم یہ ہے کہ فواد چوہدری کے جیل میں ہونے کے باوجود ہمارے تائید کنگان اور تجویز کندگان کو گھروں پہ چھاپے مار کہ اٹھایا جا رہا ہے۔ فواد کے ایک تائید کنندہ چوہدری مظہر گوندل کو جلالپور پولیس نے اٹھایا، کوئی بعید نہیں کہ مجھے یا دوبارہ میرے بھائی کوبھی ٹارگٹ کیا جائے۔

انہوں نے مزید کہا کہ فاشزم اور ظلم ہے کہ میرے رشتے کے دادا 80 سالہ چوہدری صابر حسین کو میرے کزن فوق شیر باز کا تجویز کنندہ بننے پر میرے گاؤں لدھڑ سےاٹھا لیا گیا ہے، اسکے تائید کنندہ نعمان جبکہ فواد چوہدری کے این اے ساٹھ سے تائید کنندہ محمد شکیل کو اسکے گھر کے دروازے توڑ کے اغواء کر لیا گیا ہے۔

اس سے قبل 22 دسمبر کو فواد چوہدری کے بھائی فراز چوہدری کو گرفتار کر لیا گیا۔ سابق وفاقی وزیر فواد چوہدری کے بھائی فراز چوہدری کو ضلع کچہری جہلم سے گرفتار کیا گیا ہے۔ ذرائع کے مطابق فرازچوہدری این اے 60 کے لیے فواد چوہدری کے کاغذات نامزدگی جمع کروانے کے لئے آئے ضلع کچہری آئے تھے۔

جہلم پولیس نے بتایا کہ فراز چوہدری متعدد مقدمات میں مطلوب ہیں، فراز چوہدری پی ٹی آئی جہلم کے سابق جنرل سیکریٹری تھے۔

بعدازاں فراز چوہدری کی اہلیہ بینا فراز نے الیکشن کمیشن میں رہائی کے لئے درخواست دائر کی تھی۔ بینا فراز کی جانب سے دائر درخواست میں فراز چوہدری کی گرفتاری کو غیر قانونی قرار دیا گیا تھا۔

واضح رہے کہ 16 دسمبر کو نیب نے جہلم پنڈدادنخان روڈ کیس میں فواد چوہدری کے وارنٹ گرفتاری جاری کردیے تھے جبکہ اسلام آباد کی ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن عدالت نے وارنٹ تعمیل کروانے کی اجازت دے دی تھی۔

فواد چوہدری کے وارنٹ جہلم پنڈدادنخان روڈ کیس میں جاری کیے گئے تھے، وارنٹ گرفتاری میں کہا گیا تھا کہ فواد چوہدری کو گرفتاری کے بعد عدالت پیش کیا جائے، عدالت پیشی کے بعد انکوائری کا آغاز ہوگا۔ فواد چوہدری پر روڈ کی تعمیر میں کمیشن لینے کا الزام ہے، جس پر اُن کے وارنٹ گرفتاری جاری کیے گئے۔

یہ بھی پڑھنا مت بھولیں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button