جہلم

دکانداروں نے نرخ ناموں کو مسترد کرتے ہوئے من مانے نرخ لگا کر گاہکوں کو لوٹنا شروع کر دیا

جہلم: شہر اور گردونواح کے دکانداروں نے سرکاری نرخ ناموں کو مسترد کرتے ہوئے من مانے نرخ لگا کر گاہکوں کو لوٹنا شروع کر دیا ، جس کی وجہ سے صارفین اوردکانداروں کے درمیان لڑائی جھگڑوں کی بھی اطلاعات موصول ہورہی ہیں۔

شہر اور گردونواح میں سیب 195 روپے کی بجائے 250 روپے،کیلا 85 روپے کی بجائے 120 روپے فی درجن،چاپانی پھل115 کی بجائے150روپے،انگور سندر خانی 275 کی بجائے 330 روپے،انگور ٹافی240 روپے کی بجائے350روپے میں فروخت ہوتا رہا۔

اسی طرح آلو71 روپے کلو کی بجائے 90 روپے، پیاز117 روپے کی بجائے 170 روپے، ٹماٹر185روپے کی بجائے 250 روپے، لہسن چائنہ 275 روپے کی بجائے 350 روپے، شملہ مرچ 270روپے کی بجائے 330 روپے، کریلا 70روپے کی بجائے 110 روپے،پھول گوبھی 90 کی بجائے 130 روپے، بھنڈی توری 90 کی بجائے 120روپے،گھیا کدو 75 روپے کی بجائے 100 روپے، مٹر 285 روپے کی بجائے 330 روپے، شلجم 75 روپے کی بجائے 110 روپے، پالک 28 کی بجائے 50 روپے میں فروخت ہوتی رہی۔شہر میں پرائس کنٹرول مجسٹریٹس موجود ہونے کے باوجود وہ اپنی ذمہ داریوں سے قطع تعلق نظر آتے ہیں۔

ادھر دکانداروں کا موقف ہے کہ وہ منڈی سے مہنگے داموں اشیاء خریدنے کے بعد سرکاری ریٹس پر فروخت نہیں کر سکتے ان کے بھی چھوٹے چھوٹے بچے ہیں۔عوامی حلقوں نے کمشنر راولپنڈی ، ڈپٹی کمشنر سے صورتحال کا سختی سے نوٹس لینے اور گرانفروشوں کیخلاف کارروائی کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button