پاکستان کے قیام اور ترقی میں مسیحی کمیونٹی کے کردار کو سراہتے ہیں، ڈاکٹر محمد فیصل

لندن: پاکستان ہائی کمیشن لندن میں روایتی کرسمس ڈنر کا اہتمام کیا گیا جس میں رگبی کے سابق میئر جیمز شیرا بطور مہمان خصوصی شریک تھے۔ مسیحی اور مسلم کمیونٹیز کے ممتاز مذہبی رہنماؤں اور اسکالرز کے علاوہ لندن بھر میں مقیم برطانوی پاکستانی مسیحی برادری کی بڑی تعداد نے کرسمس ڈنر میں شرکت کی۔

برطانیہ میں پاکستان کے ہائی کمشنر ڈاکٹر محمد فیصل نے اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے کہا کہ کرسمس روح کی تلاش، غور و فکر اور خود شناسی کا دن ہے، انہوں نے کہا کہ یسوع کا محبت، ہمدردی اور قربانی کا پیغام عالمگیریت پر مبنی ہے۔ ہائی کمشنر نے کہا کہ انسانیت کی خدمت کیلئے یکجہتی، راست بازی اور ہمدردی کی ضرورت ہے۔

ڈاکٹر محمد فیصل نے پاکستان کی تخلیق میں مسیحی برادری کے اہم کردار کو سراہا اور پھر اس کے بعد سماجی شعبے کی ترقی میں ان کے تعاون کی تعریف کی جو ملک بھر میں تعلیمی اداروں، ہسپتالوں اور صحت کی سہولیات کی تعمیر میں واضح ہے۔ انہوں نے اس بات کا اعادہ کیا کہ اقلیتوں کے حقوق کا تحفظ پاکستان کے بنیادی اصولوں کا حصہ ہے اور حکومت پاکستان اس سلسلے میں اپنی ذمہ داریاں نبھانے کیلئے پوری طرح پُرعزم ہے۔

ہائی کمشنر نے کہا کہ اقلیتیں پاکستان کا اٹوٹ انگ ہیں اور ہم اپنے جھنڈے میں اتنا ہی سفید رنگ کے مالک ہیں۔ ڈاکٹر محمد فیصل نے کہا کہ پاکستان ہائی کمیشن کے دروازے ملک کی تمام کمیونٹیز کیلئے ان کی مذہبی اور نسلی وابستگیوں سے قطع نظر کھلے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ بانی پاکستان قائد اعظم محمد علی جناحؒ جن کا یوم پیدائش اور کرسمس کا دن ایک ہے، پاکستان کے تمام شہریوں کو بلا تفریق رنگ و نسل، مذہب اور مسلک کے برابر کے حقوق کے سب سے بڑے علمبردار تھے۔

مقررین نے یسوع مسیح کی زندگی اور تعلیمات پر روشنی ڈالی، انہوں نے عالمی بھائی چارے اور پرامن بقائے باہمی کیلئے تہذیبوں کے درمیان بین المذاہب ہم آہنگی اور مکالمے کو فروغ دینے پر زور دیا۔

مقررین نے ایک جامع اور متنوع پاکستان کیلئے قائداعظمؒ کے وژن کو بھی سراہا، مختلف گرجا گھروں کے متعدد کوئرز نے کرسمس کیرول ترنم میں پڑھے جس نے کرسمس کےجشن کی خوشی اور تہوار میں اضافہ کیا۔

پروگرام کے آخر میں غزہ میں جنگ کے متاثرین کیلئے خصوصی دعائیں کیں۔ لندن میں مختلف گرجا گھروں کے پادریوں نے دعا کرائی جس میں عالمی امن اور ہم آہنگی کیلئے دعائیں کی گئیں۔

یہ بھی پڑھنا مت بھولیں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button