جہلم

جہلم میں بھکاریوں کے روپ میں نوسرباز متحرک، شہری نقدی اور طلائی زیورات سے محروم ہونے لگے

جہلم: شہر اور گردونواح میں پیشہ ور بھکاریوں اور خوبرو بھکارنوں کی یلغار، آئے روز جیب تراشی کی واداتوں کے دوران بازاروں، مارکیٹوں میں شہری بالخصوص خواتین اپنے مال و زر سے محروم خریداری کئے بغیر خواتین خالی ہاتھ گھروں کو لوٹنے پر مجبور ، انتظامیہ غائب۔

تفصیلات کے مطابق جہلم شہر کے بازاروں، شاپنگ سینٹروں، ہسپتالوں، تفریح گاہوں، گلی محلوں اور خصوصاً بازاروں میں رش کے دوران خریداری کیلئے آنے والے شہریوں، خواتین کو دوران خریداری جیب تراش ہاتھ کی ’’صفائی‘‘ سے نقدی ، موبائل، طلائی زیورات وغیرہ سے محروم کر دیتے ہیں۔

مضافاتی علاقوں اور اندرون شہر سے آئے ہوئے پیشہ ور بھکاریوں جن میں زیادہ تر تعداد خواتین اور ان کے ہمراہ بچوں کی ہوتی ہے بھیک مانگنے کی آڑ میں واداتوں کی شکل میں اپنی کارروائیوں میں مصروف دکھائی دیتے ہیں اور بھکاریوں کی ٹولیوں کی بھرمار پلازوں، مارکیٹوں میں موجود جیب تراش اور نوسر باز واداتیں کر کے چند لمحوں میں آنکھوں سے اوجھل ہو جاتے ہیں۔

اس طرح خریداری کے لئے آنے والے افراد بغیر خریداری کے خالی ہاتھ گھروں کو واپس لوٹ جاتے ہیں اور خوبرو بھکارنوں نے بھیک مانگنے کی آڑ میں ریلوے روڈ پر بالائی منزلوں میں کمرے لے رکھے ہیں جہاں سادہ لوح دیہاتوں سے آنے والے نوجوانوں کو ورغلا کر لے جاتیں ہیں اور ان کی جیبیں خالی کر کے انہیں بھاگنے پر مجبور کرتی ہیں۔

شہریوں نے ڈی پی او جہلم سے مطالبہ کیا ہے کہ ریلوے روڈ، جنرل بس اسٹینڈ ، اور دربار سلیمان پارس کے نزدیک قائم ہونے والے بھکارنوں کے اڈوں کو ختم کرنے کے احکامات جاری کئے جائیں۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button