ملت اسلامیہ خلفائے راشدین کی اتباع کر کے قرآن و سنت کی تعلیمات کی روح تک پہنچ سکتی ہے، پیر سید محمد عرفان شاہ مشہدی

بریڈفورڈ: سنی جمعیت عوام یوکے کے زیر اہتمام 23ویں سالانہ انٹرنیشنل حق چار یار کانفرنس جامعہ فاطمیہ کالج بریڈفورڈ میں منعقد ہوئی کانفرنس کی صدارت حجتہ الاسلام پیر سید محمد عرفان شاہ مشہدی نے کی۔

صاحبزادہ پیر سید ازکیٰ جلال الدین شاہ مشہدی کی زیر نگرانی ہونے والی اس کانفرنس کے مہمان خصوصی پیر سید منور حسین شاہ جماعتی سجادہ نشین آستانہ عالیہ علی پور سیداں شریف تھے۔

اس موقع پر پیر سید محمد عرفان شاہ مشہدی نے صدارتی خطاب کرتے ہوئے کہا کہ خلفائے راشدین رضی اللہ تعالہ عنہم کی تعلیمات روز قیامت تک مشعل راہ ہیں ان کی خلافت پر ایمان لانا ہر خطرے سے محفوظ ہونے کی نشانی ہے ملت اسلامیہ خلفائے راشدین کی اتباع کر کے قرآن اور سنت کی تعلیمات کی روح تک پہنچ سکتی ہے۔

انہوں نے کہاکہ خلفائے راشدین نے قرآن اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے پیغام کو ایک جماعت کی صورت میں نافذ اور پیش کیا آج ملت اسلامیہ کے پاس محفوظ قرآن اور حدیث جو منور شکل میں موجود ہے خلفائے راشدین کا عطیہ ہے۔

پیر سید منور حسین شاہ جماعتی نے کہا کہ ناموسِ اہلِ بیت اطہار اور صحابہ کرام رضی اللہ عنہم کا احترام عین جزو ایمان ہے صحابہ کرام سب سے زیادہ اللہ سے ڈرنے والے، سب سے زیادہ اللہ کی اطاعت کرنے والے اور سب سے زیادہ اہل بیت کی تعظیم کرنے اور سکھانے والے تھے، آج امت اہلِ بیت اطہار کی تعظیم جانتی ہے تو حضرات صحابہ کرام رضی اللہ عنہم کی بیان کردہ احادیث نبوی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سے جو انہوں نے امت تک نہ صرف پہنچائی بلکہ عملی تعظیم کر کے بھی دکھائی۔

انہوں نے کہا کہ آج ہم ایک خطرناک اور نازک دور سے گزر رہے ہیں ان حالات میں صحابہ کرام کی مثالی زندگی کو مشعل راہ اور ان کی تعلیمات پر عمل پیرا ہونا ہو گا۔

کانفرنس سے علامہ پیر سید اشتیاق حسین شاہ گیلانی، سید حامد رضا جیلانی، علامہ محمد چمن زمان نجم القادری، علامہ ظفر اقبال فاروقی، علامہ شہباز احمد صدیقی یونان، علامہ سید سلطان شاہ مشہدی، مفتی ولی رضا قادری، علامہ پیر یمین الدین برکات احمد چشتی، مفتی محمد بشیر احمد طاہر، علامہ نبیل افضل قادری، علامہ حافظ شفیق جماعتی، علامہ ساجد علی شامی، صاحبزادہ سید نیاز قادری، محمد عرفان جلالی عرفانی، صاحبزادہ سید زبیر احمد بخاری، صاحبزادہ عبدالرحیم اثر نوشاہی، قاری نیاز احمد گولڑوی، شفیق جماعتی، مولانا فرخ اقبال قادری، مولانا عمران حسین عرفانی، قاری محمد رضوان نعیمی، چوہدری نعیم اقبال، حافظ محمد قاسم صدیق چشتی، چوہدری وسیم احمد اور دیگر نےبھی خطاب کیا۔

علماء نے اپنے خطابات میں رسول صلی اللہ علیہ وسلم کے اسوہ حسنہ کو پوری طرح اپنی زندگیوں میں رائج کرنے پر زور دیا۔ ان کا کہنا تھا کہ اس پرفتن دور میں اُمت مسلمہ کی عظمت رفتہ کو بحال کرنے کا فقط ایک ہی حل ہے کہ اس امت کا اپنے نبی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی ذات اور خلفائے راشدین رضی اللہ تعالی عنہم کے ساتھ تعلق کو مضبوط کیا جائے اور ان کے اسوہ کو اپنا کر پوری دنیا کو امن کا گہوارہ بنایا جا ئے۔

پاکستان سے آئے ہوئے معروف نعت خواں سید الطاف حسین شاہ کاظمی، صاحبزادہ سید نعمان شاہ جماعتی، علامہ قاری یونس قادری، علامہ حافظ زاہد رفیق چشتی اور دیگر نے نعت شریف اور منقبت کے نذرانے پیش کر کے تقریب کو روح پرور بنا دیا۔

اس موقع پر مفتی محمد چمن زمان نجم القادری کی کتاب ’’جزو رسول صلی اللہ وعلیہ وسلم کی بے ادبی کفر ہے‘‘ جس کو انگریزی میں علامہ ساجد شامی نے ترجمہ کیا جس کی اشاعت تحریک عظمت آل واصحاب رسول برطانیہ نے کی، کتاب کا باقائدہ اجراء پیر سید محمد عرفان شاہ مشہدی، پیر سید منور حسین شاہ جماعتی اور دیگر علماء نے اپنے دست مبارک سے کیا اور مفتی محمد چمن زمان نجم القادری کو مفتی اعظم کا لقب بھی دیا گیا۔

سادات اور علماء کرام نے حق چار یار کانفرنس کے کامیاب انعقاد پر کیک کاٹا اور پیر سید محمد عرفان شاہ مشہدی نے امت مسلمہ بلخصوص فلسطین کے مسلمانوں کے لیے خصوصی اجتماعی دعا کی۔

یہ بھی پڑھنا مت بھولیں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button