ہر شعبے میں تقسیم اوورسیز پاکستانی کمیونٹی کا المیہ ہے، محمد عجیب

بریڈفورڈ: برطانیہ کے پہلے ایشیائی سابق لارڈ میئر بریڈ فورڈ محمد عجیب نے پاکستان کے ہائی کمشنر ڈاکٹر محمد فیصل کے دورہ بریڈفورڈ کا خیر مقدم کرتے ہوئے کہا کہ یہ ضروری ہے کہ پاکستان کے ارباب اختیار برطانیہ کے مختلف شہروں میں بسنے والی پاکستانی اور کشمیری کمیونٹی کے مسائل سنیں اور انہیں حل کرنے کی کوشش کی جائے ۔

بریڈفورڈ قونصلیٹ میں ہونے والی عوامی میٹنگ میں پاکستان کے ہائی کمشنر نے برطانیہ میں آباد پاکستانی کمیونٹی کی کچھ کمزوریوں کی نشاندہی کرتے ہوئے مشورہ دیا کہ کمیونٹی برطانیہ میں آپس کی تقسیم ختم کرے اور برطانیہ میں کامیابیوں کے تسلسل کو برقرار رکھتے ہوئے آپس میں اتحاد کو یقینی بنائے۔

سابق لارڈ میئر بریڈفورڈ محمد عجیب نے ہائی کمشنر کی بات سے اتفاق کرتے ہوئے کہا کہ ہمارا المیہ ہے کہ ہم ہر شعبے میں تقسیم ہیں ،برطانیہ میں نصف صدی سے زیادہ عرصہ گزار چکے ہیں، اب ہماری چوتھی نسل پروان چڑھ رہی ہے، اس کے باوجود ہم برطانیہ میں درست ترجیحات نہیں اپنا سکے۔

انہوں نے کہا کہ ہم پاکستان کے سیاسی معاملات میں زیادہ مصروف ہیں پاکستان کی سیاسی جماعتوں سے ہمارا حد سے زیادہ جذباتی لگاؤ ​​ہے، ہمیں فلسطین کی موجودہ صورتحال سے سبق سیکھنا چاہئے اور اپنے آپ سے سوال کرنا چاہئے کہ ہمارے شور و غل کے باوجود ہم وہاں کی جنگ کے خاتمے کیلئےحکومت یا اپوزیشن پر اثر انداز ہونے سے کیوں بے بس ہیں، ہمیں اپنی نسلوں کے مستقبل کے بارے میں زیادہ سوچنا ہوگا۔

انہوں نے کہا کہ پاکستان کا مستقبل پاکستان میں رہنے والے 25 کروڑ عوام کے پاس ہے، انہیں فیصلہ کرنے دیں کہ وہ کس سیاسی نظام کو اپنانا چاہتے ہیں اور کس کو چلانا چاہتے ہیں، برطانیہ میں دوسری قومیتیں بھی آباد ہیں ان کے اندر کوئی شوروغل نہیں وہ خاموشی سے اپنی ترقی کا سفر جاری رکھے ہوئے ہیں، جب کہ ہماری کمیونٹی تعلیم اور دیگر شعبوں میں ان سے پیچھے ہے، ہمیں اپنی ترجیحات پر نظر ثانی کرنی چاہئے برطانیہ میں ہماری نسلیں ترقی کریں گی تو دنیا ہمیں عزت کی نگاہ سے دیکھے گی اور پاکستان اور کشمیر کیلئے بھی ہماری آواز موثر انداز میں سنی جائے گی۔

یہ بھی پڑھنا مت بھولیں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button