برطانیہ کے نئے ویزا قوانین قابل مذمت ہیں، امجد ملک

مانچسٹر: کنزرویٹو پارٹی نے برطانیہ کی یونیورسٹیوں اور سکولوں کے دروازے غیر ملکی طالبعلموں پر بند کرنے کا جو حالیہ فیصلہ کیا ہے اس کی جتنی بھی مذمت کی جائے کم ہے۔

ان خیالات کا اظہاراے پی ایل برطانیہ کے صدر بیرسٹر امجد ملک نے گفتگو کرتے ہوئے کیا۔انہوں نے کہا کہ برطانیہ کے زرمبادلہ کے ذخائر کو فیسوں کی مد میں سہارادینے والےغیر ملکی طالبعلموں کوبرطانوی حکومت نےلاوارث چھوڑ دیاہے جس کی جتنی بھی مذمت کی جائے کم ہے۔

انہوں نے کہا کہ ایسے برطانوی شہری جو اپنے عزیزواقارب اور خاندان میں پاکستان جا کر شادیاں کرتے ہیں، ان کیلئے برطانیہ کے دروازے بند کر دیئے گئے ہیں ،ایسے قوانین نافذ کرنے سے قبل کنزرویٹو پارٹی کی حکومت اس امر پر غور کرتی کہ برطانیہ ایک فلاحی ریاست ہے مگر اسے ایک ایسی ریاست کے طو رپر متعارف کرانا کسی صورت بھی قابل قبول نہیں جو اس کا تشخص تباہ کر دے۔

بیرسٹر امجد ملک نے کہا کہ برطانیہ میں زیر تعلیم لاکھوں طالبعلموں نے ایسے قوانین سے خوفزدہ ہو کر مختلف ممالک میں تعلیم حاصل کرنےکیلئےجدوجہد شروع کر دی ہے اور سب سے زیادہ آسٹریلیا، کینیڈا، امریکہ اور جرمنی کے اداروں میں داخلوں کیلئےسرچنگ کی جا رہی ہے۔

انہوں نے کہا کہ پورے برطانیہ میں وکلاء برادری اور ممبران پارلیمنٹ سے تاریخی احتجاج کیلئے رابطہ کیا جا رہا ہے تاکہ وہ اس قانون کو نافذ نہ ہونے دیں۔

یہ بھی پڑھنا مت بھولیں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button