جہلم کے شہری سرکاری ہسپتالوں میں علاج معالجہ کے لئے دربدر بھٹکنے لگے

جہلم: سرکاری ہسپتال کے ڈاکٹرز کی عدم دلچسپی، شہر سمیت ضلع بھر کے شہری دل سمیت دیگر بیماریوں کے علاج معالجہ کے لئے دربدر بھٹکنے لگے۔ دل ، آرتھو، سرمیں چوٹیں لگنے والے مریضوں کا علاج معالجہ ناممکن ہو گیا۔سرکاری ڈاکٹرز مذکورہ امراض میں مبتلا مریضوں کو پرائیویٹ ہسپتالوں سمیت راولپنڈی ریفر کر کے جان چھڑانے لگے۔

تفصیلات کے مطابق جہلم شہر سمیت ضلع بھر میں اہم بیماریاں جن میں دل ، آرتھو اورفالج کے مریضوں کا سرکاری ہسپتال میں علاج کرنے کی بجائے پرائیویٹ ہسپتالوں میں ریفر کررہے ہیں۔

نجی ہسپتالوں میں دل کے امراض میں مبتلا مریضوں کے والز کی تبدیلی سمیت پیچیدہ سرجری کے نام پر لاکھوں روپے اینٹھ لئے جاتے ہیں جبکہ غریب متوسط طبقہ کے مریض سرکاری ہسپتالوں میں علاج معالجہ نہ ہونے کی وجہ سے موت کی وادی میں چلے جاتے ہیں۔

صحت کارڈ پر سرکاری ونجی ہسپتالوں میں ہارٹ سرجری سے صاف انکار اور ٹال مٹول سے کام لیا جاتا ہے جبکہ امراض قلب ، سرمیں چوٹیں لگنے ،ہڈی جوڑ توڑ، اور فالج کے مریضوں کا بْرا حال ہے۔ سرکاری ہسپتال میں مذکورہ بیماریوں میں مبتلا مریضوں کو کوئی ریلیف نہیں مل رہا۔ دوسری جانب ادویات اور آلات جراحی کی کمی کے باعث بیشتر مریض موت کی وادی میں چلے جاتے ہیں۔

شہر کی سماجی ، رفاعی ، فلاحی اور شہری تنظیموں کے عمائدین نے نگران وزیر اعلیٰ پنجاب اور نگران صوبائی وزیرصحت سے ہنگامی بنیادوں پر ایکشن لینے کا مطالبہ کیا ہے۔

یہ بھی پڑھنا مت بھولیں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button