جہلم کے قومی اسمبلی کا حتمی نتیجہ روک دیا گیا، انتخابات میں دھاندلی کے الزامات مسترد

پی ٹی آئی کے آزاد امیدوار کی درخواست پر حلقہ این اے 60 جہلم ون کا حتمی نتیجہ روک دیا گیا

دینہ (رضوان سیٹھی) لاہور ہائی کورٹ کے بنچ راولپنڈی اور الیکشن کمیشن نے قومی اسمبلی کے حلقہ این اے 60 جہلم ون کا حتمی نتیجہ روک دیا۔

تفصیلات کے مطابق حلقہ این اے 60 جہلم ون سے پاکستان تحریک انصاف کے حمایت یافتہ آزاد امیدوار حسن عدیل نے لاہور ہائی کورٹ راولپنڈی بینچ میں رٹ دائر کرتے ہوئے موقف اختیار کیا کہ فارم 45کے مطابق میرے ووٹ ایک لاکھ سے زائد بنتے ہیں اور میری ووٹوں کا اندراج کم کیا گیا۔

مکمل خبر پڑھنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

مخلوط نہیں بلکہ قومی حکومت تشکیل پائے گی، فواد چوہدری

اینٹی کرپشن عدالت میں پیشی کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے فواد چوہدری کا کہنا تھا کہ پوری دنیا میں انتخابات پر سوالات اٹھائے جارہے ہیں،مخلوط نہیں بلکہ قومی حکومت تشکیل پائے گی، آزاد امیدواروں پر کوئی پابندی نہیں، وہ اپنا فیصلہ کرنے میں آزاد ہیں۔

راولپنڈی کی احتساب عدالت کے جج نے سابق وفاقی وزیر فواد چوہدری کے خلاف کرپشن کیس بغیر کارروائی کے 22 فروری کو ملتوی کردی۔

سابق وفاقی وزیر اطلاعات فواد چوہدری کو جہلم کی تحصیل دینہ کے نجی ہاؤسنگ سوسائٹی کرپشن کیس میں ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن جج علی نواز کی عدالت میں پیش کیا گیا، سماعت بغیر کارروائی 22 فروری تک ملتوی کردی گئی۔

مکمل خبر پڑھنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

الیکشن کمیشن نے انتخابات میں دھاندلی کے الزامات کو مسترد کردیا

الیکشن کمیشن آف پاکستان نے انتخابات میں دھاندلی کے الزامات کو مسترد کردیا ہے۔

الیکشن کمیشن نے اعلامیہ میں کہا ہے کہ ایک دو واقعات سے انکار نہیں کیا جاسکتا تاہم اس کے تدارک کیلئے متعلقہ فورمز موجود ہیں۔ کچھ حلقوں میں نتائج کی تاخیر سے کسی مخصوص سیاسی جماعت کو فائدہ یا نقصان نہیں پہنچا۔

اعلامیہ کے مطابق مشکلات اور مسائل کے باوجود 8 فروری کو انتخابی عمل پرامن رکھنے میں کامیاب رہے، الیکشن کمیشن کی جانب سے شکایات پر فوری فیصلے کیے جارہے ہیں۔

مکمل خبر پڑھنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

حلقہ این اے 60 کا حتمی نتیجہ روک دیا گیا

جہلم: الیکشن کمیشن آف پاکستان نے ریٹرننگ افسر کو جہلم کے حلقہ این اے 60 کا حتمی نتیجہ جاری کرنے سے روک دیا۔

الیکشن کمیشن میں انتخابی عذرداریوں سے متعلق درخواستوں پر سماعت ہوئی جس دو بینچز تشکیل دیے گئے۔ بینچ نمبر ایک میں ممبر سندھ نثار درانی اور ممبر بلوچستان شاہ محمد جتوئی جبکہ بینچ نمبر دو میں ممبر پنجاب بابر حسن بھروانہ اور ممبر خیبرپختونخوا اکرام اللہ خان شامل ہیں۔

الیکشن کمیشن نے جہلم کے حلقہ این اے 60 جہلم ون سمیت این اے 56 راولپنڈی، این اے 53 راولپنڈی، این اے 69 منڈی بہاوالدین، این اے 57 راولپنڈی، این اے 52 راولپنڈی، این اے 126 لاہور، این اے 127 لاہور اور این اے 87 خوشاب کے حتمی نتائج جاری کرنے سے روک دیا۔

اسی طرح الیکشن کمیشن نے پی بی 14 نصیر آباد، پی بی 44 کوئٹہ، پی پی 33 گجرات، پی پی 126 جھنگ اور پی پی 128 جھنگ، پی پی 7 سرگودھا، پی پی 133 ننکانہ صاحب، پی پی 15 راولپنڈی، پی پی 43 منڈی بہاوالدین، پی پی 12 راولپنڈی، پی پی 53، پی پی 4 اٹک، پی پی 121 ٹوبہ ٹیک سنگھ، پی پی 279 لیہ، پی پی 17 راولپنڈی اور پی پی 6 مری میں حتمی نتیجہ جاری کرنے سے بھی روک دیا گیا۔

ممبر نثار درانی نے کہا کہ جو ہار گیا وہ جشن منا رہا ہے اور جو جیت گیا وہ دھاندلی کے الزامات لگا رہا ہے، ایسا رویہ کب تک چلے گا؟ ہار اور جیت جمہوریت کا حسن ہے۔

اسپیشل سیکریٹری الیکشن کمیشن نے کہا کہ ریٹرننگ افسران زیادہ تر حلقوں میں حتمی نتائج جاری کر چکے ہیں، اس موقع پر نتائج روکنے سے اگلے مراحل تاخیر کا شکار ہوں گے۔

وکیل بابر اعوان نے کہا کہ 8 فروری والا الیکشن ٹھیک کرایا گیا لیکن 9 فروری کو جو ہوا اس کی الیکشن کمیشن سے شکایت نہیں کر رہا، الیکشن کمیشن ڈسکہ کیس میں ریٹرننگ افسران کو سخت سزائیں دے چکا ہے، صرف نتائج روکنا کافی نہیں، جس ریٹرننگ افسر نے حلف کی خلاف ورزی کی اس کے خلاف سخت کارروائی کی جائے۔

بابر اعوان نے این اے 106 ٹوبہ ٹیک سنگھ میں ووٹوں کی دوبارہ گنتی کا مطالبہ کیا، جس پر الیکشن کمیشن نے این اے 106 ٹوبہ ٹیک سنگھ میں حتمی نتائج روکتے ہوئے ریٹرننگ افسر سے رپورٹ مانگ لی۔

کھیوڑہ کے نوجوانوں نے سرمایہ داروں اور سفید پوشوں کی سیاست کا خاتمہ کر دیا

کھیوڑہ شہرمیں پی ٹی آئی کے حمایت یافتہ امیدوار ایم این اے61کرنل (ر) شوکت مرزا1294اور امیدوار ایم پی اے حلقہ پی پی26 بریگیڈئیر (ر) مشتاق احمد للِہ نے 1700ووٹوں کی لیڈسے الیکشن میں کامیابی حاصل کی۔ کھیوڑہ شہر کے نوجوانوں نے سرمایہ داروں اور سفید پوشو ں کی سیاست کا خاتمہ کر دیا، لوگوں نے پرچیاں ن لیگ اور پیپلز پارٹی کے کیمپ سے بنوائیں اور اندر ووٹ پی ٹی آئی کے حمایت یافتہ امیدواروں کو دے کر بھاری لیڈ سے جتوایا۔

تفصیلات کے مطابق جنرل الیکشن 2024میں حلقہ این اے61پی ٹی آئی کے حمایت یافتہ امیدوار کرنل (ر) شوکت مرزا نے 5196 ووٹ امیدوار ایم پی اے حلقہ پی پی 26 بریگیڈئیر (ر) مشتاق احمد للِہ نے 5706 ووٹ حاصل کیے اور ان کے مدمقابل مسلم لیگ ن کے امیدوار ایم این اے چوہدری فرخ الطاف نے3902ووٹ اور حلقہ پی پی26کے امیدوار حاجی ناصر للِہ نے4006ووٹ حاصل کیے۔

مکمل خبر پڑھنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

جہلم میں پی ٹی آئی کے حمایت یافتہ آزاد امیدواروں کی کامیابی پر کارکنوں کا جشن

جہلم: ضلع جہلم میں صوبائی اسمبلی کی نشستوں پر پی ٹی آئی کی آزاد امیدواروں کی شاندار کامیابی پر کارکنوں اور عوام کی بڑی تعداد نے جیتنے والوں کے ڈیروں پر حاضری، ڈیروں پر جشن کا سماں رہا۔

کا رکن ڈیروں پر مٹھائیاں تقسیم کرتے رہے اور ڈھول کی تھاپ پر رقص کرتے دکھائی دیئے ۔ عوام کی بڑی تعداد نے تالیاں بجا کر پاکستان تحریک انصاف کے حمایت یافتہ آزاد امیدواروں کا والہانہ استقبال کیا۔

مکمل خبر پڑھنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

حلقہ پی پی 26؛ دوبارہ گنتی کی درخواست مسترد ہونے کے بعد ناصر محمود نے شکست تسلیم کر لی

پنڈدادنخان: دوبارہ گنتی کی درخواست مسترد ہونے کے بعد جہلم کے صوبائی اسمبلی کے حلقہ پی پی 26 جہلم تھری سے مسلم لیگ (ن) کے امیدوار حاجی ناصر محمود للِہ نے شکست تسلیم کر لی۔

پاکستان مسلم لیگ (ن) ضلع جہلم کے جنرل سیکرٹری اور امیدوار حاجی ناصر محمود للِہ نے اپنے بیان میں کہا کہ کندوال سے لیکر چوٹالہ تک الیکشن میں ساتھ نبھانے والے تمام ساتھیوں، دوستوں، بزرگوں، ہمدردوں کے ممنون ہیں کہ جنہوں نے ہر بار کی طرح اس مرتبہ بھی بےپناہ محبت اور عزت سے نوازا۔

انہوں نے کہا کہ ہار جیت کھیل کا حصہ ہے ، عوام کے فیصلے کو کھلے دل سے تسلیم کرتے ہیں اور اپنی غلطیوں، کوتاہیوں کو دور کرنے کی کوشش کرتے ہوئے انشاءاللہ اگلی مرتبہ نئے جذبے کے ساتھ میدان میں اتریں گے۔ جیتنے والے امیدواران کے لئے نیک تمنائیں۔

مکمل خبر پڑھنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

ضلع جہلم میں دفعہ 144 نافذ ہے، غیر قانونی اجتماع کی اجازت نہیں ہے، جہلم پولیس

جہلم پولیس کا کہنا ہے کہ پنجاب بھر میں دفعہ 144 نافذ العمل ہے۔ کسی بھی مقام پر غیر قانونی اجتماع کی اجازت نہیں ہے، غیر قانونی اجتماع کی صورت میں قانونی کارروائی کی جائے گی، اسلحہ کی نمائش پر پابندی ہے۔

جہلم پولیس نے ایک پریس ریلیز میں کہا کہ الیکشن کمیشن کے ضابطہ اخلاق پر عملدرآمد یقینی بنایا جائے گا، خلاف ورزی کی صورت میں قانونی کارروائی عمل میں لائی جائے گی، قانون پر عملدرآمد ہر ذمہ دار شہری پر فرض ہے، کسی قانون شکنی کو برداشت نہیں کیا جائے گا۔

مکمل خبر پڑھنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

الیکشن ختم؛ جہلم کی سڑکوں پر لگے امیدواروں کے بینرز اتارنے کیلئے آپریشن کلین اپ شروع

جہلم: الیکشن ختم ہونے کے بعد شہر کی سڑکوں پر لگے امیدواروں کے پینا فلکس ، بینرز اتارنے کیلئے آپریشن کلین اپ شروع ہو گیا۔

پہلے مرحلے میں شاندار چوک سے سول لائن روڈ وائے کراس تک بینرز اور سٹیمرز اتارے گئے ۔

مکمل خبر پڑھنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

جہلم میں مسلسل 5 الیکشن جیتنے والی ن لیگ صوبائی سیٹوں سے محروم

جہلم: (ن)لیگ کا قلعہ آزاد امیدوار وںنے فتح کر لیا جبکہ ن لیگ قومی اسمبلی کی محض 2 نشستیں حاصل کر سکی ۔ مسلسل پانچ الیکشن جیتنے والی ن لیگ صوبائی سیٹوں سے محروم ہوگئی۔حلقہ پی پی 24، 25 اور 26سے آزاد امیدواروں نے کامیابی حاصل کی۔ مسلم لیگ ن ، جماعت اسلامی ،تحریک لبیک ، پاکستان پیپلز پارٹی کے امیدوار دوڑ میں کوسوں میل پیچھے رہ گئے۔

ضلع جہلم کی 2 قومی اسمبلی کی نشستوں پربھی حیران کن نتائج سامنے آئے۔ گزشتہ 5جنرل الیکشن اور 2 ضمنی الیکشن مسلسل جیتنے والی ن لیگ اپنی صوبائی اسمبلی کی 3 سیٹوں سے ہاتھ دھو بیٹھی۔

مکمل خبر پڑھنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

حلقہ پی پی 25 جہلم ٹو سے مسلم لیگ (ن) کے امیدوار چوہدری ندیم خادم نے کھلے دل سے شکست تسلیم کر لی

عام انتخابات میں ڈسٹرکٹ جیل جہلم کا کوئی اسیر ووٹ کاسٹ نہ کرسکا

جہلم: عام انتخابات میں راولپنڈی ریجن کی 4جیلوں کے 189اسیروں نے پوسٹل بیلٹ کے ذریعے اپنا حق رائے دہی استعمال کیا، ڈسٹرکٹ جیل جہلم کا کوئی اسیر ووٹ کاسٹ نہ کرسکا۔

ذرائع کے مطابق اڈیالہ جیل راولپنڈی کے 19 قیدیوں نے پوسٹل بیلٹ پیپرکے ذریعے اپنے ووٹ کاسٹ کئے جبکہ ڈسٹرکٹ جیل منڈی بہاؤالدین کے 104، ڈسٹرکٹ جیل گجرات سے54 مرد اور 2خواتین قیدیوں اور سب جیل چکوال سے 10 قیدیوں نے ڈاک کے ذریعے ووٹ ڈالے۔

ذرائع کے مطابق راولپنڈی ریجن کی دوجیلوں ڈسٹرکٹ جیل جہلم اور اٹک کا کوئی اسیر ووٹ کاسٹ نہ کرسکا۔

مکمل خبر پڑھنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

سرکاری و نجی دفاتر، کاروباری مراکز، گھروں، سیاسی حلقوں میں انتخابات کے نتائج موضوع بحث

جہلم: سرکاری و نجی دفاتر، کاروباری مراکز، گھروں اور سیاسی حلقوں میں انتخابات کے نتائج موضوع بحث، انتخابات کے نتائج پر دوستوں اور سیاسی حریفوں سے شرطیں ہارنے والے اس کا ازالہ کر رہے ہیں۔

تفصیلات کے مطابق جہلم سمیت ضلع بھر میں عام انتخابات کے انعقاد کے بعد کاروبار زندگی معمول پر آنا شروع ہو گیا ہے تاہم سیاسی جماعتوں سے وابستگی رکھنے والے ابھی تک ’’الیکشن بخار ‘‘میں مبتلا ہیں۔ سرکاری و نجی دفاتر،کاروباری مراکز، سیاسی حلقوں حتیٰ کہ گھروں میں بھی عام انتخابات کے نتائج موضوع بحث ہیں۔

مکمل خبر پڑھنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

حلقہ این اے 60 اور 61 میں مبینہ دھاندلی، پی ٹی آئی کارکنوں کا آر او آفس جہلم کے سامنے احتجاج

جہلم کے قومی اسمبلی کے حلقوں این اے اے 60 اور 61 میں مبینہ دھاندلی کے خلاف پی ٹی آئی کے حمایت یافتہ آزاد امیدوار کے حامیوں اور پی ٹی آئی کے کارکنوں کی جانب سے جہلم میں احتجاج جاری ہے۔

آر او آفس کے باہر جی ٹی روڈ پر کارکنان کی جانب سے شدید نعرے بازی کی جا رہی ہے۔ پولیس کی بھاری نفری آر او آفس کی حفاظت کیلئے پہنچ گئی۔

مکمل خبر پڑھنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

حلقہ پی پی 24 جہلم ون سے ن لیگ اور آئی پی پی کے مشترکہ امیدوار یاور کمال نے شکست تسلیم کر لی

پریزائیڈنگ افسران کو آر او آفس بلوا کر جعلی 45 فارم پر دستخط کروائے جارہے ہیں۔ حسن عدیل، شوکت اقبال مرزا

جہلم سے پی ٹی آئی کے حمایت یافتہ آزاد امیدواروں حسن عدیل اور شوکت اقبال مرزا نے الزام عائد کیا کہ ہمارے ساتھ ایک اور ظلم کیا جارہا ہے، کچھ پریزائیڈنگ آفیسر نے ہمیں کال کرکے اطلاع دی ہے کہ پریزائیڈنگ افسران کو دوبارہ آر او آفس بلوا کران سے دوبارہ جعلی 45فارم پر دستخط کروائے جارہے ہیں۔

آزاد امیدواروں نے کہا کہ ہماری 50ہزارسے زائد لیڈ کو ختم کرکے دھاندلی کے ذریعے ہمیں ہرایا گیا، اس کو کور کرنے لیے جعلی ووٹیں بھی ڈالی جارہی ہے۔

مکمل خبر پڑھنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

ضلع جہلم اور پورے پنجاب میں شیر دھاڑا ہے، ترقی کا سفر دوبارہ شروع کریں گے۔ بلال اظہر کیانی

جہلم سے ن لیگ کا صفایا، دھاندلی سے جیتی گئی قومی اسمبلی کی نشستیں بھی واپس لیں گے، مشتاق احمد

جہلم کی قومی اسمبلی کی نشستوں پر مسلم لیگ (ن) اور صوبائی اسمبلی کی نشستوں پر پی ٹی آئی کے آزاد امیدوار کامیاب

جہلم: عام انتخابات 2024 میں قومی اسمبلی کے 2 حلقوں میں مسلم لیگ ن اور صوبائی اسمبلی کے 3 حلقوں میں پی ٹی آئی کے حمایت یافتہ آزاد امیدواروں نے میدان مار لیا۔

جہلم کے قومی اسمبلی کے حلقہ این اے 60 سے مسلم لیگ (ن) کے امیدوار بلال اظہر کیانی نے 99 ہزار 948ووٹ لیکر مد مقابل پی ٹی آئی کے حمایت یافتہ آزاد امیدوار چوہدری حسن عدیل سے 9 ہزار 4 سو 74 ووٹ کی لیڈ جبکہ جہلم قومی اسمبلی کے حلقہ 61 میں مسلم لیگ (ن) کے امیدوار چوہدری فرخ الطاف نے 88 ہزار 2 سو 38 ووٹ حاصل کرکے مد مقابل شوکت اقبال مرزا سے 4 ہزار 19 ووٹوں کی لیڈ سے شکست دے دی۔

جہلم کے صوبائی اسمبلی کے حلقہ پی پی 24 جہلم ون میں پی ٹی آئی کے حمایت یافتہ آزاد امیدوار رفعت محمود زیدی نے 55 ہزار 29 ووٹ حاصل کرکے آئی پی پی اور مسلم لیگ ن کے مشترکہ امیدوار راجہ یاور کمال سے 5 ہزار 248ووٹوں کے مارجن سے جیت حاصل کی۔

جہلم کے صوبائی اسمبلی کے حلقہ پی پی 25 جہلم ٹو سے پی ٹی آئی کے حمایت یافتہ آزاد امیدوار یاسر محمود قریشی نے 67 ہزار 391ووٹ لیکر مسلم لیگ (ن) کے امیدوار چوہدری ندیم خادم کو 26 ہزار 831ووٹ سے شکست دے ڈالی۔

صوبائی اسمبلی کے حلقہ پی پی 26 جہلم تھری میں پی ٹی آئی کے حمایت یافتہ آزاد امیدوار برگیڈئیر ریٹائرڈ مشتاق احمد نے 60 ہزار 181ووٹ حاصل کرکے پاکستان مسلم لیگ ن کے امیدوار ناصر محمود للِہ کو 5 ہزار 607ووٹوں سے پچھاڑ ڈالا۔

مسلم لیگ ن اور آزاد امیدواروں کی کامیابی پر نوجوان ڈھول کی تھاپ پر بھنگڑے ڈالتے اور مٹھائیاں بانٹتے رہے۔

اس موقع پر کامیاب ہونے والے لیڈران نے اپنے ووٹرز کا شکریہ ادا کیااور کہا کہ اس وقت سب سے بڑا چیلنج مہنگائی ہے جس کے خاتمے کے لئے بھرپور کردار ادا کریں گے۔

حلقہ این اے 61: شوکت اقبال مرزا کے دھاندلی کے الزامات، آر او کی ری کاؤنٹنگ کی درخواست لینے سے معذرت

پنڈدادنخان: جہلم کے قومی اسمبلی کے حلقہ این اے 61 جہلم ٹو سے پاکستان تحریک انصاف کے حمایت یافتہ آزاد امیدوار شوکت اقبال مرزا نے انتخابی نتائج کو دھاندلی زدہ قراردے دیا اور کہا کہ رات گئے انتخابی نتائج کو تبدیل کیا گیا ہے۔

مکمل خبر پڑھنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

این اے 60: پچاس ہزار ووٹوں کی لیڈکو رات گئے شکست میں تبدیل کردیاگیا ہے، آزاد امیدوار حسن عدیل

جہلم: حلقہ این اے 60 سے پی ٹی آئی کے حمایت یافتہ آزاد امیدوارحسن عدیل نےاپنے ویڈیو بیان نے الزام عائد کیا کہ پچاس ہزارووٹوں کی لیڈکو رات گئے شکست میں تبدیل کردیاگیا۔

انہوں نے کہا کہ حلقہ این اے 60 جہلم ون سے تقریباً الیکشن جیت گئے تھے، تینوں شہروں کی وارڈوں سے الیکشن میں کامیابی حاصل کی۔ پچاس ہزارکی لیڈموجودتھی مگر رات گئے مجھے بتایاگیا آپ کی لیڈکم ہوتی جاری ہے۔ میرے آراو کے آفس پہنچنے پر ہم کو دھکے مار کر باہر نکال دیاگیا۔

مکمل خبر پڑھنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

حلقہ این اے 61 جہلم ٹو سے مسلم لیگ (ن) کے امیدوار چوہدری فرخ الطاف جیت گئے

پنڈدادنخان: انتخابات 2024 کے غیر سرکاری و غیر حتمی نتائج آگئے، قومی اسمبلی کے حلقہ این اے 61 کے تمام 380 پولنگ اسٹیشن کا مکمل نتیجہ آ گیا۔

جہلم اپڈیٹس کے مطابق جہلم کے قومی اسمبلی کے حلقہ این اے 60 جہلم ون سے پاکستان مسلم لیگ ن کے امیدوار چوہدری فرخ الطاف 88238ووٹ لے کر کامیاب ہو گئے۔

پاکستان تحریک انصاف کے حمایت یافتہ آزاد امیدوار شوکت اقبال مرزا 84215ووٹ لے کر دوسرے نمبر پر رہے، تحریک لبیک پاکستان کے امیدوار عمران حیدر 28176 ووٹ لے کر تیسرے نمبر پر رہے۔

حلقہ این اے 60 جہلم ون سے مسلم لیگ (ن) کے امیدوار بلال اظہر کیانی جیت گئے

جہلم: انتخابات 2024 کے غیر سرکاری و غیر حتمی نتائج آنے کا سلسلہ جاری ہے، قومی اسمبلی کے حلقہ این اے 60 کے تمام 386 پولنگ اسٹیشن کا مکمل نتیجہ آ گیا۔

جہلم اپڈیٹس کے مطابق جہلم کے قومی اسمبلی کے حلقہ این اے 60 جہلم ون سے پاکستان مسلم لیگ ن کے امیدوار بلال اظہر کیانی 99948 ووٹ لے کر کامیاب ہو گئے۔

پاکستان تحریک انصاف کے حمایت یافتہ آزاد امیدوار حسن عدیل 90474 ووٹ لے کر دوسرے نمبر پر رہے، تحریک لبیک پاکستان کے حمایت یافتہ آزاد امیدوار چوہدری زاہد اختر 24273 ووٹ لے کر تیسرے نمبر پر رہے۔

حلقہ پی پی 24 جہلم ون سے پی ٹی آئی کے حمایت یافتہ آزاد امیدوار رفعت زیدی جیت گئے

سوہاوہ: عام انتخابات 2024 کے غیر سرکاری و غیر حتمی نتائج آنے کا سلسلہ جاری ہے، حلقہ پی پی 24 کے تمام 269 پولنگ اسٹیشن کا مکمل نتیجہ آ گیا۔

جہلم اپڈیٹس کے مطابق جہلم کے صوبائی اسمبلی کے حلقہ پی پی 24 جہلم ون سے پاکستان تحریک انصاف کے حمایت یافتہ آزاد امیدوار رفعت محمود زیدی 55029 ووٹ لے کر کامیاب ہو گئے۔

پاکستان مسلم لیگ (ن) کے حمایت یافتہ استحکام پاکستان پارٹی کے امیدوار راجہ یاور کمال 49781 ووٹ لے کر دوسرے نمبر پر رہے، تحریک لبیک پاکستان کے امیدوار سید عرفان امیر شاہ بخاری 30031 ووٹ لے کر تیسرے نمبر پر رہے۔

حلقہ پی پی 25 جہلم ٹو سے پی ٹی آئی کے حمایت یافتہ آزاد امیدوار یاسر محمود قریشی جیت گئے

جہلم: انتخابات 2024 کے غیر سرکاری و غیر حتمی نتائج آنے کا سلسلہ جاری ہے، حلقہ پی پی 25 کے تمام 255 پولنگ اسٹیشن کا مکمل نتیجہ آ گیا۔

جہلم کے صوبائی اسمبلی کے حلقہ پی پی 25 جہلم ٹو سے پی ٹی آئی کے حمایت یافتہ آزاد امیدوار یاسر محمود قریشی 67 ہزار 391ووٹ لے کر جیت گئے۔

جہلم اپڈیٹس کے مطابق پاکستان مسلم لیگ کے امیدوار سابق ایم پی اے چوہدری ندیم خادم 34 ہزار 560 ووٹ لے کر دوسرے نمبر پر رہے جبکہ تحریک لبیک پاکستان کے امیدوار زبیر سلیمان 11 ہزار 319 ووٹ لے کر تیسرے نمبر پر رہے۔

حلقہ پی پی 26 جہلم تھری سے پی ٹی آئی کے حمایت یافتہ آزاد امیدوار مشتاق احمد جیت گئے

جہلم: انتخابات 2024 کے غیر سرکاری و غیر حتمی نتائج آنے کا سلسلہ جاری ہے، حلقہ پی پی 26 کے تمام 242 پولنگ اسٹیشن کا مکمل نتیجہ آ گیا۔

جہلم کے صوبائی اسمبلی کے حلقہ پی پی 26 جہلم تھری سے پی ٹی آئی کے حمایت یافتہ آزاد امیدوار مشتاق احمد 60 ہزار 181 ووٹ لے کر جیت گئے۔

جہلم اپڈیٹس کے مطابق پاکستان مسلم لیگ کے امیدوار ناصر محمود للِہ 54 ہزار 574 ووٹ لے کر دوسرے نمبر پر رہے۔

عام انتخابات کے پُرامن اور تشدد سے پاک انعقاد پر قوم کو دلی مبارکباد پیش کرتے ہیں، آئی ایس پی آر

پاک افواج نے عام انتخابات کے پُرامن انعقاد پر قوم کو مبارکباد پیش کی ہے۔

آئی ایس پی آر کی جانب سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ ہم عام انتخابات کے پرامن اور تشدد سے پاک انعقاد پر قوم کو دلی مبارکباد پیش کرتے ہیں، قانون نافذ کرنے والے اداروں کے ساتھ مسلح افواج کو فخر ہے کہ انہوں نے مقدس انتخابی عمل کے انعقاد کے دوران سیکیورٹی فراہم اور سول اداروں کی مدد کی اورآئین پاکستان کے مطابق اہم کردار ادا کیا۔

ترجمان پاک فوج کے مطابق 6000 انتہائی حساس پولنگ اسٹیشنوں پر 137000 فوجی اہلکاروں اور سول آرمڈ فورسز کی تعیناتی اور 7800 سے زیادہ کوئک رسپانس فورس کے دستوں کے ساتھ عوام کے لیے محفوظ ماحول کو یقینی بنایا گیا۔
51 بزدلانہ دہشت گردانہ حملوں کے باوجود، جو زیادہ تر کے پی اور بلوچستان میں ہوئے، جن کا مقصد انتخابی عمل کو متاثر کرنا تھا، سیکیورٹی اہلکار پرعزم رہے، ان حملوں میں 12 افراد (جن میں سیکیورٹی فورسز اور قانون نافذ کرنے والے اداروں کے 10 اہلکار شامل ہیں) نے شہادت قبول کی 39 دیگر زخمی ہوئے جبکہ مختلف کارروائیوں کے دوران 5 دہشت گرد بھی مارے گئے۔

ترجمان پاک فوج کا کہنا ہے کہ پورے پاکستان میں امن و سلامتی کو مؤثر طریقے سے یقینی بنایا گیا، فعال انٹیلی جنس اور فوری کارروائی کے ذریعے بہت سے ممکنہ خطرات کو بے اثر کر دیا گیا جو ہمارے شہریوں کے جمہوری حقوق کے تحفظ کے لیے ہماری سیکیورٹی ایجنسیوں کے غیر متزلزل عزم کو ظاہر کرتا ہے۔

آئی ایس پی آر کے مطابق قانون نافذ کرنے والے دیگر اداروں کا شکریہ ادا کرتے ہیں جنہوں نے جمہوری عمل کی حفاظت کے لیے مسلح افواج کے ساتھ مل کر کام کیا، ہمیں پوری امید ہے کہ ہماری قربانیاں رائیگاں نہیں جائیں گی اور یہ الیکشن پاکستان میں جمہوریت کو مزید مضبوط کرنے اور عوام کی امنگوں کو پورا کرنے کی راہ ہموار کرے گا۔

ترجمان پاک فوج کا کہنا ہے کہ مسلح افواج ملک میں امن و سلامتی کو برقرار رکھنے کے لیے پرعزم ہیں، اور ریاست کی جمہوری روایات کے تحفظ کے لیے غیر متزلزل حمایت فراہم کرنے کے لیے تیار ہیں۔

ملک بھر کی طرح ضلع جہلم میں ہونے والے عام انتخابات 2024 کے لیے جاری پولنگ کا وقت ختم ہوگیا اور اب ووٹوں کی گنتی کا عمل جاری ہے۔

پولنگ کا عمل صبح 8 بجے سے شام پانچ بجے تک بغیر کسی وقفے کے جاری رہا جبکہ سیکیورٹی کے حوالے سے بھی خاص انتظامات کیے گئے ہیں۔

ضلع جہلم کی قومی و صوبائی اسمبلی کے 5 حلقوں پر ضلع بھر سے 100 سے زائد امیدوار حصہ لے رہے ہیں جبکہ چند حلقوں میں بڑی سیاسی شخصیات بھی مدمقابل ہیں۔

جہلم میں شہری کا ووٹ کوئی اور کاسٹ کر گیا

جہلم میں پولنگ آفیسر کی بڑی کوتاہی، شہری کا ووٹ کوئی اور کاسٹ کر گیا۔

تفصیلات کے مطابق عام انتخابات کے سلسلہ میں ملک بھر کی طرح ضلع بھر میں بھی پولنگ کا عمل جاری ہے وہیں جہلم میں ووٹنگ میں پولنگ آفیسر کی بڑی کوتاہی کا معاملہ سامنے آئی ہے۔

جہلم کے پولنگ اسٹیشن نمبر244گورنمنٹ پوسٹ گریجویٹ کالج میں ووٹر کا ووٹ پہلے ہی کاسٹ ہو گیا، ووٹر غلام مصطفی پولنگ اسٹیشن پہنچا تو عملے نے بتایا آپکا ووٹ ڈل چکا ہے۔

شہری غلام مصطفی نے ہاتھ اور انگوٹھے عملے کو دیکھا ئے کہ میں نے ووٹ ہی کاسٹ نہیں کیا، پولنگ ایجنٹ کے پاس بھی غلام مصطفی کا نام ٹک ہی نہیں۔

پرزائیڈنگ آفیسر نے ووٹر کو اپنے دوسرے بھائیوں کو بلانے واپس گھر بھیج دیا۔

ضلع بھر میں عام انتخابات کیلیے پولنگ کا عمل جاری

جہلم: ملک بھر کی طرح ضلع جہلم میں بھی عام انتخابات کیلیے پولنگ کا عمل جاری ہے۔

پولنگ کا عمل صبح 8 بجے سے شام پانچ بجے تک بغیر کسی وقفے کے جاری رہے گا جبکہ سیکیورٹی کے حوالے سے بھی خاص انتظامات کیے گئے ہیں۔

تفصیلات کے مطابق ضلع جہلم کی قومی و صوبائی اسمبلی کے 5 حلقوں پر ضلع بھر سے 100 سے زائد امیدوار حصہ لے رہے ہیں جبکہ چند حلقوں میں بڑی سیاسی شخصیات بھی مدمقابل ہیں۔

الیکشن کمیشن کے اعداد و شمار کے مطابق10 لاکھ 56 ہزار 480ووٹرز حق رائے دہی استعمال کریں گے جن میں 25 سال تک عمر کے لاکھوں نئے ووٹرزبھی شامل ہیں۔

ووٹ کاسٹ کرنے کے لیے شہری کو اصل شناختی کارڈ کے ساتھ پولنگ اسٹیشن جانا ہوگا، جہاں وہ قومی اور صوبائی اسمبلی کے ممبر کو ووٹ کاسٹ کرے گا، قومی کیلیے سبز جبکہ صوبائی اسمبلی کے بیلٹ پیپر کا رنگ سفید ہوگا۔

الیکشن کمیشن کے مطابق پولنگ کیلیے ضلع جہلم میں 766 پولنگ اسٹیشن قائم کیے گئے ہیں جن میں 36حساس ہیں۔ پولنگ اسٹیشن اور دیگر امور کی نگرانی کیلیے 3 ہزار سے زائد سکیورٹی اہلکار ڈیوٹیز دیں گے۔ پیرا ملٹری فورس دوسرے جبکہ تیسرے درجے میں پاک فوج ذمہ داری انجام دے گی جو کوئیک رسپانس فورس کے طور پر کام کرے گی۔

پہلی مرتبہ ووٹ ڈالنے والوں کیلئے ضروری ہدایات

ملک بھر کی طرح ضلع جہلم میں 2024 کے عام انتخابات کیلئے جہاں ووٹنگ کے عمل کا آغاز ہوچکا ہے وہیں ہر شہری حق رائے دہی کا استعمال کرنے جوک در جوک پولنگ اسٹیشن کا رخ کر رہا ہے۔

الیکشن کمیشن آف پاکستان (ای سی پی) کی جانب سے ووٹرز کی آسانی کیلئے ووٹ ڈالنے کا طریقہ کار اور ضروری ہدایات جاری کی گئی ہیں۔ ووٹ ڈالنے کے لیے اصلی شناختی کارڈ کا ساتھ ہونا لازم ہے۔ کاپی یا سافٹ کاپی قابلِ قبول نہیں ہوگی۔

پولنگ اسٹیشن میں داخلے کے بعد ووٹر کو اپنا اصل شناختی کارڈ پریزائڈنگ افسر کو دینا ہوگا۔ شناختی کارڈ پولنگ افسر کے حوالے کرنے کے بعد ووٹر کے دائیں انگوٹھے پر اَن مِٹ روشنائی سے نشان لگایا جائے گا۔

پریزائیڈنگ افسر ووٹر کی تصویر کے سامنے انگوٹھے کا نشان لگوائے گا اور ووٹر کا نام ووٹر فہرست سے کاٹ دے گا۔ اگلے مرحلے میں اسسٹنٹ پریزائیڈنگ افسران کی طرف سے قومی اور صوبائی اسمبلی کے لیے بیلٹ پیپرز دیے جائیں گے۔

خیال رہے کہ ہر ووٹر کو ووٹنگ کیلئے قومی اسمبلی کا سبز اور صوبائی اسمبلی کا سفید بیلٹ پیپر دیا جائے گا۔ اس کے بعد ووٹرز ووٹنگ اسکرین کے پیچھے صوبائی و قومی اسمبلی کے بیلٹ پیپرز پر امیدوار کے نام یا انتخابی نشان پر مہر لگائیں گے۔

آخری مرحلے میں ووٹر کو بیلٹ پیپر فولڈ کرکے بیلٹ بکس میں ڈالنا ہوگا۔ بیلٹ پیپر تہہ کرنے سے قبل یہ بات یقینی بنانا ضروری ہے کہ مہر کی سیاہی سوکھ چکی ہو۔

8300 کی سروس بھی متاثر ، ووٹرز اپنے ووٹ کے بارے میں معلومات سے محروم

جہلم: ضلع جہلم سمیت ملک بھر میں عام انتخابات کیلئے پولنگ کا عمل شروع ہو چکا ہے تاہم زیادہ تر ووٹرز اپنے ووٹ کے بارے میں معلومات سے محروم ہیں۔

موبائل فون سروس عارضی طور پر معطل ہونے سے موبائل فون پر 8300 کی سروس بھی متاثر ہو گئی ہے جس کی وجہ سے ووٹرز کو اپنے ووٹ کے بارے میں معلومات کے حصول میں مشکلات کا سامنا ہے۔

مکمل خبر پڑھنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

انٹرنیٹ چلے یا نہ چلے ، ای ایم ایس چلتا رہے گا ، الیکشن کمیشن

الیکشن کمیشن نے کہا ہے کہ انٹرنیٹ چلے یا نہ چلے الیکشن منیجمنٹ سسٹم چلتا رہے گا۔

الیکشن کمیشن حکام نے بریفنگ دیتے ہوئے کہا کہ سکیورٹی اور دیگر وجوہات پر بعض جگہ نتائج میں تاخیر ہو سکتی ہے مگر ردوبدل نہیں ہو سکتی۔

مکمل خبر پڑھنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

وزارت داخلہ کو انٹرنیٹ سروسز کے حوالے سے ہدایات نہیں دیں گے، چیف الیکشن کمشنر

چیف الیکشن کمشنر سکندر سلطان راجہ کا کہنا ہے کہ الیکشن کمیشن نے وزارت داخلہ کو انٹرنیٹ سروسز کے حوالے سے کوئی ہدایات نہیں دے گا۔

الیکشن کمیشن کے باہر میڈیا سے بات کرتےہوئے چیف الیکشن کمشنر نے کہا کہ امید ہے انتخابات کا عمل بخیریت و عافیت مکمل ہوگا، سیکیورٹی صورتحال کاجائزہ لینا وزارت داخلہ اور ایجنسیز کا کام ہے۔

انہوں نے واضح کیا کہ الیکشن کمیشن نے وزارت داخلہ کو انٹرنیٹ سروسز کے حوالے سے کوئی ہدایات نہیں دے گا، اگر ہم کہیں کہ موبائل سروس کھول دیں اور دہشتگردی کا کوئی واقعہ ہوجائے تو کون ذمہ دار ہوگا؟

فارم 45 سے متعلق الیکشن کمیشن کی ہدایت

جہلم: الیکشن کمیشن نے فارم 45 کی تیاری اور تفصیل سے متعلق ہدایات جاری کر دیں ۔

الیکشن کمیشن نے کہا ہے کہ فارم 45 کی تصویر لیکر ریٹرننگ افیسر کو بذریعہ موبائل فون بھیجیں، اگر موبائل فون کے سگنلز نہ ہوں یا کسی بھی وجہ سے فارم 45 کی ترسیل میں دشواری پیش آئے تو پریزائیڈنگ افسر کا انتظار کیے بغیر ریٹرننگ افسر فارم 45 اور پولنگ کا سامان لیکر آر او آفس فوری روانہ ہو اور ترسیل کو یقینی بنائے۔

پریزائیڈنگ افسران، سینئر اسسٹنٹ پریزائیڈنگ افسران مکمل احتیاط سے فارم 45 تیار کریں تاکہ غلطی کی گنجائش نہ رہے، ہدایت نامے میں کہا گیا پریزائیڈنگ افسران ، سینئر اسسٹنٹ پریذائڈنگ افسران فارم 45 پر اپنے شناختی کارڈ والے دستخط کریں، پولنگ اسٹیشن میں موجود امیدوار الیکشن ایجنٹس پولنگ ایجنٹس سے فارم 45 پر مختص مقررہ جگہ پر دستخط کریں۔

امیدوار، الیکشن ایجنٹ یا پولنگ ایجنٹ دستخط سے انکار کرے یا گنتی ختم ہونے سے پہلے پولنگ اسٹیشن چھوڑے تو پریزائیڈنگ افسر فارم 45 پر مختصر وجہ تحریر کریں، دستخطوں کے بعد پریزائیڈنگ افسران فام 45 کی ایک کاپی پولنگ اسٹیشن کے باہر نمایاں جگہ پر چسپاں کریں، فام 45 کی دستخط شدہ کاپی کی نقول وہاں موجود پولنگ ایجنٹوں اور مبصرین کو فراہم کریں۔

پولنگ اسٹیشن کے اطراف میں سیاسی سرگرمیوں پر پابندی

الیکشن کمیشن نے الیکشن کمشنرز کو ضابطہ اخلاق پر عملداری کا مراسلہ جاری کردیا۔

مراسلہ میں کہا گیا ہے کہ پولنگ ڈے پر پولنگ اسٹیشن کی چار سو میٹرز کی حدود میں ہر قسم کی انتخابی مہم پر مکمل پابندی ہوگی جبکہ 100 میٹر کی حدود میں کسی بھی سیاسی جماعت کے جھنڈے بینر یا ایسے مواد کی تشہر پر مکمل پابند ہے جس سے کسی مخصوص امیدوار کی حوصلہ افزائی یا حوصلہ شکنی ہو۔

الیکشن کمیشن نے مراسلے میں کہا ہے کہ ضابطہ اخلاق کی خلاف ورزی غیر قانونی تصور ہوگی، تمام مانیٹرنگ ٹیموں کو ہدایت جاری کی جائے کہ وہ پولنگ اسٹیشنز کا دورہ کریں اور ضابطہ پر عملداری کو یقینی بنائیں۔

ضلع جہلم میں موبائل فون سروسز عارضی طور پر معطل کرنے کا فیصلہ

عام انتخابات کے موقع پر نگران حکومت نے ضلع جہلم سمیت ملک بھر میں موبائل فون سروسز عارضی طور پر معطل کردیں۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق ترجمان وزارت داخلہ کی جانب سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ ملک میں دہشت گردی کے حالیہ واقعات کے نتیجے میں قیمتی جانوں کا ضیاع ہوا ہے، امن وامان کی صورتحال کو قائم رکھنے اور ممکنہ خطرات سے نمٹنے کے لیے حفاظتی اقدامات ناگزیر ہیں۔

بیان میں مزید کہا گیا کہ اس لیے ملک بھر میں موبائل سروس کو عارضی طور پر معطل کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔

مکمل خبر پڑھنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

آج فیصلے کا دن ہے، جہلم کی کی عوام نے آج اپنے حق کے لئے نکلنا ہے۔ چوہدری زاہد اختر کی عوام سے اپیل

عام انتخابات کے لیے ضلع جہلم میں سامان کی ترسیل مکمل

جہلم: کل ہونے والے عام انتخابات 2024ء کے لیے ضلع جہلم میں انتخابی سامان کی ترسیل مکمل ہو گئی۔

تمام پریذائیڈنگ افسران کو ریٹرننگ آفیسرز کے دفاتر سے پولنگ مٹیریل بیلٹ باکسز، بیلٹ پیپرز اور دیگر سامان پولیس اور قانون نافذ کرنے والے دیگر اداروں کی سکیورٹی میں پولنگ اسٹیشنز پر بھجوایا گیا۔

الیکشن کمیشن کے ضابطہ اخلاق کے مطابق تمام پولنگ اسٹیشنز پر پریذائیڈنگ افسران کو عمل درآمد کی ہدایات جاری کی گئی ہیں۔

جہلم میں ڈسٹرکٹ مانیٹرنگ آفس سے الیکشن کا سامان تقسیم کیا گیا۔

الیکشن کمیشن نے ووٹوں کی دوبارہ گنتی کیلئے ایس او پیز جاری کردیے

انتخابات میں ووٹوں کی دوبارہ گنتی کی صورت میں الیکشن کمیشن کی جانب سے ایس او پیز کا اجرا کردیا گیا۔

الیکشن کمیشن کے مطابق الیکشن کمیشن سیکرٹریٹ 10 اور 11 فروری کو کھلا رہے گا اور درخواست دہندگان یا امیدواران کی جانب سے ووٹوں کی دوبارہ گنتی کی درخواستیں صبح 8:30 سے شام 4:30 تک وصول کی جائیں گی، ان درخواستوں پر الیکشن کمیشن میں سماعت 10 اور 11 ہفتہ اور اتوار کو بھی ہوگی۔

پٹیشن جمع کرانے کے لیے ضروری ہدایات ایس او پیز الیکشن کمیشن کی ویب سائٹ پر اَپ لوڈ کر دی گئی ہیں جن کے مطابق اپنی درخواستیں جمع کروائیں جس کے چیدہ چیدہ نکات یہ دیے گئے ہیں :

الیکشن کمیشن کے نوٹی فکیشن کے مطابق  پٹیشنز کی 9 کاپیاں ایک اصل اور 8 کاپیاں مع مکمل تفصیل جمع کروانی ہوں گی جس پر دائر کرنے کی تاریخ ہوگی۔ درخواست دہند گان درخواست کی سافٹ کاپی (PDF) میں مہیا کرے گا اور ساتھ ہی جو بھی اس کے پاس ثبوت ہوں گے وہ بھی یو ایس بی میں فراہم کرے گا اوردرخواست کے ساتھ منسلک کرے گا۔

درخواست دہند گان اپنے شناختی کارڈ کی کاپی درخواست کے ساتھ منسلک کریں گے اور اپنا درست موجودہ پتا اور رابطہ نمبر لکھیں گے۔ مزید ازاں مدعا علیہان کے مکمل کوائف اور پتا تحریر کرنا ہوگا۔

اگر کسی وکیل کے ذریعے درخواست دائر کی جا رہی ہو تو درخواست کے ساتھ وکالت نامہ منسلک ہو،ایڈووکیٹ کا کارڈ اور دیگر رابطہ نمبر موجود ہوں۔ تمام درخواستوں کا باقاعدہ انڈیکس، صفحات کی نمبرنگ اور فلیگنگ ہو۔

الیکشن کمیشن کے مطابق صرف مقررہ تاریخ اور وقت پر وصول شدہ درخواستیں الیکشن کمیشن کے سامنے سماعت کے لئے مقرر ہوں گی۔

کمشنر اور آر پی او کا جنرل الیکشن2024کے حوالےسےآر اوآفس جہلم اورمرکزی کنٹرول روم کادورہ


جہلم: کمشنر راولپنڈی ڈویژن لیاقت علی چھٹہ اور آر پی او راولپنڈی سید خرم علی نے آر او آفس جہلم اور مرکزی کنٹرول روم کا جنرل الیکشن 2024 کے حوالے سے دورہ کیا۔

کمشنر اور آر پی او نے پولنگ کے حوالے سے سیکورٹی انتظامات کا تفصیلی جائزہ لیا، کمشنر راولپنڈی اور آر پی راولپنڈی کا الیکشن کے حوالے سے کئے گئے انتظامات پر اطمینان کا اظہار کیا۔

تفصیلی خبر یہاں پڑھیں۔

الیکشن کے روز انٹرنیٹ سروس بند نہیں ہوگی، پی ٹی اے

 پاکستان ٹیلی کمیونیکیشن اتھارٹی ( پی ٹی اے ) کا کہنا ہے کہ الیکشن کے روز ملک میں انٹرنیٹ سروس بند نہیں ہوگی۔

پی ٹی اے کی جانب سے جاری بیان کے مطابق الیکشن کے روز صارفین کو انٹرنیٹ کی سہولت میسر ہوگی اور انٹرنیٹ سروس بغیر کسی تعطل اور رکاوٹ کے جاری رہے گی۔ حکومت نے پولنگ کے دن انٹرنیٹ بند کرنے کے کوئی احکام نہیں دئیے۔

گزشتہ روز نگراں وزیراطلاعات مرتضیٰ سولنگی نے بھی بیان میں کہا تھا کہ حکومت کی جانب سے انتخابات کے موقع پر موبائل فون سروس اور انٹرنیٹ بند کرنے کی کوئی گائیڈ لائن نہیں دی گئی ہے۔ کسی جگہ امن و امان کی صورتحال خراب ہوتی ہے تو مقامی انتظامیہ صورتحال کا جائزہ لے کر فیصلہ کرسکتی ہے۔

یہ بھی پڑھنا مت بھولیں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button