پاکستان میں گردہ اور مثانہ کی بیماریاں آہستہ آہستہ بڑھتی جا رہی ہیں، ڈاکٹر احمد نواز بھٹی

پنڈدادنخان: پرو فیسر سرجن ڈاکٹر احمد نواز بھٹی نے کہا کہ زندگی اللہ تعالیٰ کی خاص نعمت اور امانت ہے اس لیے ہمیںاس کی قدر کرنی چاہیے اور اس میں ضیانت نہیں کرنی چاہیے ، وطن عزیز میں گردہ اور مثانہ کی بیماریاں آہستہ آہستہ بڑھتی جا رہی ہیں، گُردے کی تکلیف کے آغاز میں ہی ڈاکٹر سے رجوع کرناچاہیے۔

پاکستان کے معروف ماہر امراض گردہ ،مثانہ پرو فیسر سرجن ڈاکٹر احمد نواز بھٹی نے کہا ہے کہ گُردے کی تکلیف کے آغاز میں ہی ڈاکٹر سے رجوع کرناچاہیے کیونکہ اگر گردے فیل ہوجائیں تو مریض کے لیے مشکلات میں اضافہ ہوجاتا ہے، بزرگ کہتے ہیں جان ہے تو جہان ہے، زندگی اللہ تعالیٰ کی امانت ہے اس لیے ہمیں اس کی قدر کرنی چاہیے۔

سرگودھا میڈیکل کالج کے ماہر امراض گردہ مثانہ اینڈ کڈنی ٹرانسپلانٹ سرجن پروفیسر ڈاکٹر احمد نواز بھٹی نے کھیوڑہ میں مقیم ضلع جہلم کے سینئر صحافی اور سابق صدر ڈویژنل یونین آف جرنلسٹس راولپنڈی ڈویژن یوسف ناز سے خصوصی ملاقات کے دوران کہاکہ مرغن غذاؤں کا ستعمال ترک کرنے اور پیدل چلنے کو معمول بنا لینے اور صاف پانی کے کم از کم بارہ گلاس روز پینے سے گردہ اور مثانہ کی بیماریوں سے بچا جاسکتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ ترقی پذیر ممالک جیسا کہ پاکستان میں بھی گردے اور مثانہ کی بیماری کی شرح بڑھتی جارہی ہے، قابل فکر بات ہے جبکہ نوجوان طبقہ بھی ان امراض کا شکار ہورہا ہے جوکہ لمحہ فکریہ ہے، ان بیماریوں کے نتیجہ میں معاشی مسائل کے ساتھ ساتھ بے پناہ معاشرتی مسائل بھی جنم لے رہے ہیں اور شرح اموات میں بھی اضافہ ہورہا ہے۔

ڈاکٹر احمد نواز بھٹی نے مزید کہا کہ کہ شوگر بیماریوں کی ماں ہے، شوگر کی بیماری خون کی شریانوں کو نقصان پہنچا کر جسم کو اندر سے دیمک کی طرح کھوکھلا کردیتی ہے۔ شوگر کی بیماری آنکھوں اور دل کے علاوہ گردوں کو بھی نقصان پہنچاتی ہے اس سے غفلت برتنا خطرناک ہے، نشے سے پرہیز اور اچھی خوراک کے استعمال کے ساتھ ساتھ معمول سے ورزش کرنا اور پیدل چلنے سے بیماریوں سے بچا جا سکتا ہے۔

یہ بھی پڑھنا مت بھولیں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button