جہلم میں پتنگ بازی پر عائد پابندی پر مکمل عمل درآمد نہ کروایا جاسکا

جہلم: پتنگ بازی پر عائد پابندی پر مکمل عمل درآمد نہ کروایا جاسکا، پتنگ بازی جیسے خطرناک خونی کھیل سے انسانی جانوں کو نقصان پہنچنے کا خدشہ لاحق ہے۔ کبھی کوئی زخمی ہو جاتا ہے تو کبھی کوئی اپنی جان سے بھی ہاتھ دھو بیٹھتا ہے، اس حوالے سے قانون سازی پر سختی سے عملدرآمد کروانے کی ضرورت ہے۔ پتنگیں تیار کرنے اور فروخت کرنے والے دکانداروں کو گرفتار کیا جائے تاکہ حادثات میں کمی واقع ہو سکے۔

ان خیالات کا اظہار شہریوں نے اخبار نویسوں سے خصوصی گفتگو کرتے ہوئے کیا۔ انہوں نے کہا کہ جو کھیل کھیل نہ رہے اور جانوں کیلئے خطرہ بن جائے تو اس کھیل کو بند کر دینا چاہیے ، دوسری جانب شہریوں کا کہنا ہے کہ کیمیکل اور دھاتی ڈور کی تیاری پر سخت پابندی عائد ہونی چاہئے۔

انہوں نے کہا کہ پہلے بھی پتنگ بازی کی جاتی تھی نوجوان اپنے گھروں کی چھتوں پر پتنگیں اڑاتے تھے اور اس میں دھاگے کا استعمال کیا جاتا تھا اب تو اس میں جدت آگئی ہے کیمیکل اور دھاتی ڈور استعمال کی جارہی ہے جو انسانی جانوں کے لئے سخت نقصان دہ ہے، سڑکوں پر جاتے اور گلی محلوں میں یہ خطرناک ڈور شہریوں کے گلوں پر پھر جاتی ہے جس سے لوگ زخمی ہو جاتے ہیں۔

شہریوں نے ڈسٹرکٹ پولیس آفیسر ناصر محمود باجوہ سے مطالبہ کیاہے کہ اس خونی کھیل پر قابو پانے کے لئے ضلع بھر کی پولیس کو احکامات جاری کئے جائیں پتنگیں فروخت کرنے والے دکانداروں اور پتنگیں اڑانے والے شوقین نوجوانوں کے خلاف مقدمات درج کئے جائیں تاکہ کسی قسم کا ناخوشگوار واقع رونما نہ ہو سکے۔

یہ بھی پڑھنا مت بھولیں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button