جہلم کی ن لیگی ٹکٹوں کا فیصلہ صادر ہو چکا؟

سوشل میڈیا اور واٹس ایپ گروپس میں اب تک انتہائی با وثوق ذرائع نے تو ضلع جہلم کے ٹکٹوں کا فیصلہ صادر فرمایا ہوا ہے۔ بہت سے دوستوں نے لاہور کے واٹس ایپ گروپس میں چلنے والے ٹکٹوں کی تفصیل کو شئیئر کر رکھا ہے اور اس پر اپنے اپنے ذرائع سے تصدیق حاصل کر رکھی ہے، اسی طرح راقم سمیت بہت سے مقامی سینئر صحافیوں کی طرف سے حلقے میں امیدواروں کی پوزیشن گروپس اور دھڑوں کی بنیاد اپنی اپنی رائے اور عوامی رائے کو آپ عوام کے سامنے رکھا ہوا ہے ۔

اب سوال پیدا ہوتا ہے کہ کیا واقعی ہی جہلم کی ٹکٹوں کا فیصلہ صادر ہو چکا ہے ؟

ضلع جہلم میں بلال اظہر کیانی کے بعد چوہدری ندیم خادم نے باضابطہ الیکشن کمپین کا آغاز کر دیا ہے۔ گزشتہ روز ان کی گفتگو میں بڑا واضح اعلان تھا کہ ضلع جہلم کی ٹکٹوں کا فیصلہ جنوری میں ہونا ہے لہٰذا وہ اپنی کمپین کا آغاز کر رہے ہیں ۔

ایک بات تو واضح ہے کہ گھرمالہ خاندان نے مسلم لیگ (ن) سے وفا کی انتہا کر رکھی ہے اور اگر چوہدری فرخ الطاف کو ن لیگ کا ٹکٹ ملتا ہے تو گھرمالہ خاندان ہر صورت الیکشن لڑے گا اور ایسی صورت میں بھی چوہدری ندیم خادم’ چوہدری فرخ الطاف کو ن لیگ کے ٹکٹ کے باجود شکست دینے کی صلاحیت رکھتے ہیں۔

باقی رہی بات بلال اظہر کیانی کی صوبائی اسمبلی میں الیکشن لڑنے کی تو راولپنڈی ڈویژن میں ہونے والی میٹنگ جس میں صباء صادق اور دیگر نے انٹرویو لیے اس میں بلال اظہر کیانی کا ہر گز صوبائی اسمبلی کیلئے انٹرویو نہیں ہوا لیکن پارٹی پھر بھی اپنے طور پر کوئی بھی فیصلہ کرنے کا اختیار رکھتی ہے۔ لیکن انٹرویو اب تک غلام حسین کیانی، راجہ اویس خالد اور مہر محمد فیاض کا ہی ہوا ہے جس میں راولپنڈی ڈویژن کے پارلیمانی بورڈ میں ہونے والی انٹرویو میں سب سے فیورٹ امیدوار راجہ اویس خالد ہی سامنے آ رہے ہیں۔

جو کچھ بھی ہو حلقے کی جغرافیائی صورتحال میں دونوں امیدواروں کا دینہ سے ہونا ممکن نہیں لہٰذا سوہاوہ/ ڈومیلی کو خالی نہیں رکھا جا سکتا، اگر بلال اظہر کیانی آئیں یا چوہدری ندیم خادم یا چوہدری فرخ الطاف جبکہ اس بار چوہدری لال حسین اور چوہدری بوٹا جاوید کے ٹکٹ پر بھی تبدیلی کے امکانات ہیں۔

اگر چوہدری ندیم خادم اور گھرمالہ خاندان کو رضا مند کر کے چوہدری بوٹا جاوید کو لایا جاتا ہے اور حلقہ پی پی 24 میں راجہ اویس خالد اور بلال اظہر کیانی آتے ہیں تو فیصلے میں دس چالیس کے گیپ کو کور کرنے کے لیے چوہدری ندیم خادم کی سابقہ ایک لاکھ ووٹ اور مہر محمد فیاض اور چوہدری لال حسین کی سابقہ حاصل کردہ ووٹ میں امیدواروں کی اپنی ووٹ جمع کر کے گیپ کو کور کیا جاسکتا ہے کیونکہ راجہ یاور کمال کے وقت ایسے ہی ووٹ بینک میں اضافہ ہوا تھا جو بعد میں جیت کی صورت میں سامنے آیا تھا۔

اب الیکشن تو ہم گزشتہ دہائیوں سے ہوتا دیکھ رہے ہیں لیکن ووٹوں سے انتخاب نہ پہلے کبھی ہوا نہ آئندہ ہو گا ۔ اللہ کرے ووٹوں سے ہو یا سابقہ طریقہ کار سے لیکن ہو اس ملک کی بہتری کے لیے کیونکہ فیصلے کرنے والے اس ملک کی بہتری کا ہی ہمیشہ سوچتے ہیں لیکن اقتدار ملنے کے بعد جب سیاستدان اپنی کی چکر میں پڑھ کر اس ملک کو ڈی ٹریک کرنے کی کوشش کرتے ہیں تو پھر محب وطن اس وطن کی بقاء کے لیے فیصلے کرتے ہیں تو نظریاتی غلاموں کو پھر وہ فیصلے اچھے نہیں لگتے۔

اللہ پاک میرے ملک کی خیر فرمائے اور اس ملک کو ترقی کی راہ پر گامزن کرنے والے حکمران عطا کریں ۔

 

 

 

 

 

 

(ادارے کا لکھاری کی رائے سے متفق ہونا ضروری نہیں۔)

یہ بھی پڑھنا مت بھولیں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button