جہلم: ناقص ملاوٹ شدہ دودھ 180 سے 200 روپے فی لیٹر تک فروخت ہونے لگا

جہلم: ضلعی انتظامیہ کی مبینہ غفلت، پنجاب فوڈ اتھارٹی کی عدم توجہی کے باعث شہر سمیت مضافاتی علاقوں میں ناقص ملاوٹ شدہ دودھ 180 سے 200 روپے فی لیٹر تک فروخت ہونے لگا، پنجاب فوڈ اتھارٹی سمیت پرائس کنٹرول مجسٹریٹس دفاتر تک محدودہو کر رہ گئے۔

تفصیلات کے مطابق جہلم شہر سمیت مضافاتی علاقوں میں پنجاب فوڈ اتھارٹی کی عدم توجہی کے باعث ناقص کیمیکل ملا مضر صحت دودھ فروخت ہو رہا ہے اور دودھ فروشوں نے قیمتوں میں بھی خود ساختہ اضافہ کررکھا ہے۔ دودھ 180 روپے سے 200 روپے فی لیٹر کے حساب سے فروخت کیا جا رہا ہے۔

دودھ فروشوں کا کہنا ہے کہ گوالے ہمیں مہنگا دودھ دیتے ہیں اس لیے قیمتوں میں اضافہ کیا گیا ہے جبکہ ناقص و غیر معیاری ملاوٹ شدہ دودھ کے استعمال سے بچے مختلف امراض میں مبتلا ہو رہے ہیں جس پر پنجاب فوڈ اتھارٹی اور پرائس کنٹرول مجسٹرئیس نے مکمل آنکھیں بند کر رکھی ہیں بلکہ متعلقہ ذمہ داران دفتروں سے باہر نکل کے چیکنگ کرنا اپنی توہین سمجھتے ہیں۔

شہریوں نے ڈی جی پنجاب فوڈ اتھارٹی اور ڈپٹی کمشنر سے مطالبہ کیا ہے کہ ناقص و غیر معیاری ملاوٹ شدہ دودھ کی مہنگے داموں فروخت کرنے والے دکانداروں کے خلاف فوجداری مقدمات درج کروائے جائیں تاکہ بچے بیماریوں سے محفوظ رہ سکیں۔

یہ بھی پڑھنا مت بھولیں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button