جہلم میں عرصہ دراز سے جعلی شہد کی فروخت جاری، انتظامیہ نے آنکھیں موند لیں

جہلم شہر اور گردونواح میں عرصہ دراز سے جعلی شہد کی خرید و فروخت کا کام جاری، انتظامیہ نے آنکھیں موند لیں۔

عام فارمز میں خود ساختہ طریقے سے تیار کئے جانے والا شہد جس میں چینی ، گڑ وغیرہ اور سرخ میوہ جات سے شہد تیار کر کے اس میں کیمیکل ملا کر شہد کو بیری اورپھلائی کا شہد ظاہر کر کے مختلف بوتلوں میں ڈال کر چار سے پانچ سو روپے فی کلو تیار ہونے والے شہد کو پانچ سے سات ہزار روپے فی کلو میں فروخت کر رہے ہیں جو کہ صحت کے لئے انتہائی نقصان دہ ہے۔

اکثر شہر کی دکانوں پر یہی شہد باآسانی دستیاب ہے جو کہ دکاندار بڑے فخر سے اس شہد کو خالص شہد ظاہر کر کے مہنگے داموں فروخت کر رہے ہیں، کئی بار اس سے پہلے بھی بذریعہ اخبارات کے متعلقہ ذمہ داران کو آگاہ کیا گیا لیکن انتظامیہ نے کوئی نوٹس نہ لیا جبکہ بڑی بڑی دکانوں ،بیکریوں اور مارٹ پر یہ شہد بیری اور پھلائی کے نام سے فروخت کیا جا رہا ہے۔

معززین علاقہ نے ڈی جی پنجاب فوڈ اتھارٹی سے مطالبہ کیا ہے کہ مضر صحت شہد تیار کرکے فروخت کرنے والے دکانداروں کے خلاف قانونی کارروائیاں کی جائیں تاکہ شہریوں کو بیماریوں سے بچایا جا سکے ۔

یہ بھی پڑھنا مت بھولیں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button