مانچسٹر پولیس کو گزشتہ آٹھ سال سے شہزاد غفور نامی ملزم کی تلاش

گریٹر مانچسٹر/ بولٹن: شہزاد غفور جو مانچسٹر کا رہائشی ہے،کو گریٹر مانچسٹر پولیس گزشتہ آٹھ سال سے تلاش کررہی ہے۔

پولیس ترجمان کے مطابق ملزم پولیس کے ہائی پروفائل کیسز میں سے ایک میں مطلوب ہے، ملزم کے متعلق بتایا گیا ہے کہ اس پر غیر قانونی طور پر ڈرائیونگ کرنے کے علاوہ منشیات کی اسمگلنگ کرنے کے الزامات ہیں۔

شہزاد غفور آٹھ سال قبل ایک موٹر وے پر تیزی کے ساتھ ڈرائیونگ کر رہاتھا کہ پولیس نے اس کا تعاقب کیا اور فضا سے ہیلی کاپٹر سے اس کی فوٹیج بھی لی ،وہ جس تیزی کے ساتھ ڈرائیونگ کرتے ہوئے ہیلی فیکس کی طرف جا رہا تھا کہ اس کی گاڑی حادثے کا شکار ہوئی اور الٹ گئی۔

اس کے ساتھ ایک خاتون اور دو بچے بھی سفر کر رہے تھے، جب اس کو گاڑی سے نکالا گیا تو گاڑی سے خاتون اور دو بچوں سمیت £80000 سے £100000کے درمیان نقدی برآمد ہوئی۔ نوٹوں پر ہیروئن، کوکین اور ڈرگ کے نشانات بھی موجود تھے۔ فوٹیج میں کار کی رفتار کو بھی دکھایا گیا جہاں سے اسے گرفتار کر لیا گیا ،شہزاد غفور پر دھوکہ دہی، جائیداد پر قبضے، خطرناک ڈرائیونگ کے الزامات عائد کئے گئے۔

اس کے علاوہ ملزم پر نومبر 2013میں مانچسٹر کے علاقے ویدگنٹن سے ایک گاڑی کی تلاشی لینے کے دوران £245000مالیت کی ڈرگ برآمد ہوئی تھی مئی 2014 میں اس نے خطرناک ڈرائیونگ کا جرم قبول کیا اسے دیگر الزامات کے سلسلے میں آئندہ سال فروری میں عدالت میں پیش ہونا تھا لیکن وہ عدالت میں پیش ہونے کی بجائے فرار ہوگیاجس پر پولیس نے ملزم کی گرفتاری کیلئے وارنٹ جاری کر دیا۔

مزید بتایا گیا ہے کہ ملزم مختلف قسم کا حلیہ تبدیل کرنے کے علاوہ بوگس ناموں کے ساتھ رو پوش ہے ،وہ نیشنل کرائم ایجنسی کو بھی مطلوب افراد میں سے ایک بتایا گیا ہے۔ 2016میں یہ اطلاع دی گئی تھی کہ غفور کے بارے میں خیال کیا جاتا ہے کہ وہ ہالینڈ میں محمد شہزاد، اندول غفور، ندیم احمد اور ندیم جاوید سمیت مختلف ناموں کا استعمال کر کے رہائش اختیار کئے ہوئے ہے۔

اس سلسلے میں اس کی گرفتاری کیلئے یورپین وارنٹ گرفتاری جاری کئے گئے تھے۔ این سی اے کی ویب سائٹ پر اسے 5 فٹ 11انچ، درمیانی ساخت کے طور پر بیان کیا گیا ہے، اس کے دائیں گال پر جیب کا نشان ہے اور اس کی ناک کے دائیں حصے پر نشان ہے، اور اس کے دائیں ہاتھ کے اوپر دوسرا نشان ہے، اس کی عمر 37سال بتائی جاتی ہے لیکن اس نے 41سال ہونے کا دعویٰ بھی کیا ہے۔

پولیس کے مطابق اس کا تعلق ویلی رینج، لانگ سائٹ اور برنیج مانچسٹر کے ساتھ ویسٹ یارکشائر اور ہالینڈ سے بھی بتایا گیا ہے ، تلاش جاری ہے۔

یہ بھی پڑھنا مت بھولیں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button