بھارت جموں کشمیر میں آبادی کا تناسب تبدیل کررہا ہے، مشعال ملک

لندن: انسانی حقوق اور خواتین کو بااختیار بنانے کے بارے میں وزیر اعظم پاکستان کی معاون خصوصی مشعال حسین ملک نے لندن سے ایک ورچوئل پلیٹ فارم پر جموں و کشمیر کے بارے میں آل پارٹیز پارلیمنٹری گروپس ( اے پی پی جی) کی چیئر پرسن ایم پی ڈیبی ابراہمز کی جانب سے بلائے گئے کراس پارٹی برٹش پارلیمنٹرینز کے اجلاس میں شرکت کی۔

برطانوی پارلیمنٹیرینز کے علاوہ سول سوسائٹی اور انسانی حقوق کی تنظیموں کے ارکان نے بھی اس ورچوئل مباحثے میں حصہ لیا۔ مشعال ملک نے ارکان پارلیمنٹ کو بھارتی حکومت کی طرف سے غیر قانونی طور پر مقبوضہ جموں و کشمیر میں انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کے بارے میں آگاہ کیا۔

انہوں نے خاص طور پر مقبوضہ جموں و کشمیر میں خواتین اور بچوں کے خلاف انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیوں کا مسئلہ اٹھایا۔ انہوں نے عالمی برادری پر زور دیا کہ وہ بھارت کے اندر اقلیتوں کے ساتھ روا رکھے جانے والے سلوک ، خاص طور پر عیسائیوں اور دیگر اقلیتوں کیلئے آر ایس ایس کے نظریئے کے تحت جبری مذہب تبدیل کروانے کے عمل کا نوٹس لے۔

مشال حسین ملک نے کشمیریوں کو بھارت کے غیر قانونی طور پر مقبوضہ جموں و کشمیر کی آبادی کو تبدیل کرنے کی کوششوں پر گہری تشویش ناک اظہار کیا۔ انہوں نے کہا کہ دنیا گزشتہ 75 سال سے اقوام متحدہ کے ایجنڈے پر جموں و کشمیر کے تنازع کے حل پر خاطر خواہ توجہ نہیں دے رہی ہے۔

انہوں نے عالمی برادری پر زور دیا کہ وہ انسانی حقوق کی بین الاقوامی ذمہ داریوں کو برقرار رکھے اور جموں و کشمیر پر اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی متعلقہ قراردادوں پر عمل درآمد میں مدد کرے۔ انہوں نے برطانوی پارلیمنٹیرینز پر زور دیا کہ وہ انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کو روکنے اور مقبوضہ کشمیر میں آبادیاتی انجینئرنگ سمیت کالے قوانین کو منسوخ کرنے میں اپنا کردار زیادہ فعال طور پر ادا کریں۔

مشعال ملک نے کہا کہ ان کے شوہر یاسین ملک، جموں و کشمیر لبریشن فرنٹ (جے کے ایل ایف) کے چیئرمین سیاسی قیدی ہیں اور برسوں سے بھارت کی تہاڑ جیل میں قید ہیں۔ ان کی جواں سال بیٹی اپنے ہی والد سے ملاقات سے محروم ہے اور وہ یاسین ملک کی صحت اور تندرستی کے بارے میں سخت فکر مند ہیں۔

مشعال ملک نے خدشہ ظاہر کیا کہ یاسین ملک کو ان کی اپیل کے خلاف سزائے موت سنائی جائے گی ۔ انہوں نے برطانوی پارلیمنٹیرینز سے اپیل کی کہ وہ اس ناانصافی پر اپنی تشویش کا اظہار کریں۔ مشعال حسین ملک نے اے پی پی جی فورم کے ذریعے برطانوی پارلیمنٹرینز اور انسانی حقوق کے کارکنوں سے بات کرنے کی دعوت دینے پر شکریہ ادا کیا۔

یہ بھی پڑھنا مت بھولیں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button