غزہ واقعات کے ذمہ داروں کو انصاف کے کٹہرے میں لایا جائے، لارڈ قربان

لوٹن: لارڈ قربان حسین (ستارہ قائداعظم) نے برطانیہ کے ہائوس آف لارڈز (دارالامراء) میں اظہار خیال کرتے ہوئے لارڈز کی توجہ غزہ کے المناک واقعات کی جانب مبذول کراتے ہوئے کہا ہے کہ اطلاعات کے مطابق 7 اکتوبر سے غزہ میں تقریباً 30000 افراد ہلاک اور 70000 کے قریب زخمی ہو چکے ہیں۔ تقریباً 1 اعشاریہ 9 ملین نفوس بے گھر ہوگئے ہیں، جنہیں صحت عامہ کی بہت کم یا کوئی سہولت حاصل نہیں ہے اور انہیں ادویات اور خوراک کی بھی اشد ضرورت ہے۔

انہوں نے کہا کہ معصوم جانوں کا ضیاع قابل مذمت ہے، چاہے ان کا کسی بھی عقیدے، نسل یا نظریے سے تعلق کیوں نہ ہو اور زور دیا کہ غزہ کے واقعات کے ذمہ داروں کو انصاف کے کٹہرے میں لایا جانا چاہیے۔ یہ امر افسوسناک ہے کہ برطانوی حکومت فوری جنگ بندی کا مطالبہ کرنے میں ناکام ہو رہی ہے اور اس نے فلسطین کے لیے اقوام متحدہ کی ریلیف اینڈ ورکس ایجنسی کی حمایت بھی بند کر دی ہے۔

انہوں نے کہا کہ وہ برطانوی حکومت پر زور دیتے ہیں کہ وہ غزہ میں جنگ کو روکنے کے لیے ہر ممکن کوشش کرے اور جنگ کے متاثرین کو زیادہ سے زیادہ انسانی امداد پہنچانے میں مدد کرے۔ وہ حماس کے زیر قبضہ تمام یرغمالیوں اور اسرائیل کے زیر حراست تمام فلسطینی قیدیوں کی فوری رہائی کا مطالبہ کرتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ برطانوی وزیر خارجہ کی طرف سے فلسطین کی ریاست کو تسلیم کرنے کے بیان کا خیرمقدم کرتے ہیں کیونکہ یہ ایک سنگ میل ثابت ہوگا، ایک دو ریاستی حل کے حصول کے لئے، جہاں اسرائیلی اور فلسطینی امن کے ساتھ شانہ بشانہ رہ سکیں۔

یہ بھی پڑھنا مت بھولیں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button