الیکشن کے انعقاد پر بےیقینی؛ انتخابی مہم کیلئے بینرز، جھنڈوں کی فروخت سست روی کا شکار

جہلم: عام انتخابات کے سلسلے میں انتخابی مہم کیلئے استعمال ہونے والے تشہیری سامان پینا فلیکس، بینرز، جھنڈے، ٹوپیاں اور بیجز کی فروخت سست روی کا شکار ہے۔

جہلم شہر میں پینا فلیکس، جھنڈیاں، بیجز و پر چم فروخت کرنے والے دکانداروں کا کہنا ہے کہ گزشتہ چند دنوں سے برائے نام سامان فروخت ہونا شروع ہوا ہے، تاہم 2018 کے انتخابات کے مقابلے میں اس بار انتخابی ماحول کا فقدان ہے۔

دکانداروں کا کہنا ہے کہ انتخابی نشانات کے تنازع کے سبب 2024 کے انتخابات میں پاکستان تحریک انصاف کی انتخابی مہم منظر نامے سے غائب ہے،جس کیوجہ سے ہمارے تشہیری سامان کی فروخت میں 50 فیصد کمی واقع ہوئی ہے ۔

انہوں نے کہا کہ آج تک پی ٹی آئی کی جانب سے کوئی پیشگی آرڈر ملے بغیر پی ٹی آئی کے انتخابی نشانات کیساتھ تشہیری سامان تیا رکیا تو سرمایہ کاری کے ضائع ہونے کا ممکنہ خدشہ رہے گا۔

انہوں نے بتایا کہ فی الحال مسلم لیگ ن اور پاکستان پیپلز پارٹی کے کارکن اکا دکا جھنڈوں ، بیجز، ٹوپیاں وغیرہ خرید رہے ہیں۔

دوسری جانب پینا فلیکس تیار کرنے والے مالکان کا کہنا ہے کہ الیکشن کمیشن آف پاکستان نے مخصوص پینا فلیکس آویزاں کرنے کے احکامات جاری کررکھے ہیں جس کیوجہ سے امیدوار اور ان کے سپورٹرز سٹیمرز تیار کروانے سے گھبراتے ہیں جس سے کروڑوں روپے کی لاگت سے نصب کی گئی مشینیں ہمارے لئے بوجھ بن چکی ہیں ۔

مالکان نے ارباب اختیار سے مطالبہ کیا ہے کہ تشہیری سامان پر عائد پابندی میں نرمی کی جائے تاکہ اس صنعت سے وابستہ افراد مالی طور پر خوشحال ہو سکیں ۔

یہ بھی پڑھنا مت بھولیں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button