تمام جماعتوں بشمول ن لیگ کیساتھ مذاکرات کیلئے تیار ہیں، زلفی بخاری

لندن: پاکستان تحریکِ انصاف کے رہنما ذولفقار علی شاہ عرف زلفی بخاری نے کہا ہے کہ انکی جماعت مسلم لیگ نواز سمیت تمام جماعتوں کے ساتھ سیاسی مذاکرات کرنے پر تیار ہے اور اگر قبل از وقت انتخابی دھاندلی کا عمل ختم نہ ہوا تو پی ٹی آئی انتخابی نتائج تسلیم نہیں کرے گی۔

وہ گزشتہ روز کمیونٹی رہنما عبدالسلام امینی کی رہائش گاہ پر اپنے اعزاز میں دئیے گئے عشائیہ کے موقع پر میڈیا سےگفتگو کر رہے تھے۔ اس موقع پر پارٹی ہنما صاحبزادہ جہانگیر میئر آف لیوشم توفیق انور، میاں منیر احمد اور دیگر راہنما بھی موجود تھے۔

ایک سوال پر زلفی بخاری نے کہا کہ نیب نے عمران خان اور انکے خلاف 190 ملین پائونڈز کا جو ریفرنس دائر کیا ہے اسکی کی کوئی قانونی حیثیت نہیں کیونکہ میرے نام زمین کی الاٹمنٹ کابینہ کے اجلاس سے چھ ماہ قبل کی گئی تھی اور اسوقت میں چارماہ تک نیب جاتا رہا جہاں وہ مجھے بطورِ گواہ بلاتے تھے اور اب یکایک میں ملزم بن گیا ہوں۔ وہ انتخابات کے موقع پر کاغذاتِ نامزدگی داخل کرانے جائینگے جہاں وہ ان مقدمات کا بھی سامنا کریں گے۔

ایک اور سوال پر زلفی بخاری نے کہا کہ شیخ رشید ہمارے اتحادی رہے ہیں لیکن انکے مقابلے میں پی ٹی آئی کا امیدوار کھڑا کرنا پارٹی پالیسی کا حصہ ہے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان میں عورتوں اور بچوں سمیت پارٹی سے وابستہ لوگوں تو توڑنے موڑنے کےلئے ظلم کی انتہا کی جا رہی ہے ،اسکے خلاف وہ انسانی حقوق کی عالمی تنظیموں سے رجوع کر رہے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ فوجی قیادت اور غیر قانونی نگران حکومت کو جب تک یہ یقین نہیں ہوجاتاکہ پی ٹی آئی اتخابات میں کامیاب نہیں ہوسکتی اسوقت تک یہ انتخابات کا انعقاد نہیں کرائینگے۔

زلفی بخاری نے ایک اور سوال پر کہا کہ بیرسٹر گوہر کے پارٹی چیئرمین بننے کا اسٹیبلشمنٹ کے ساتھ تعلقات میں بہتری کے حوالے سے کوئی تعلق نہیں ،اصل چیئرمین آج بھی عمران خان ہی ہیں اور پارٹی پالیسی انہی سے وابستہ ہے۔ پی ٹی آئی اور اسٹیبلشمنٹ کے مابین کوئی دوری نہیں ہم دونوں ماضی کی طرح آج بھی ایک ہی صٖفحے پر موجود ہیں۔

انہوں نے کہا کہ پی ٹی آئی کو سیاسی عمل سے دور رکھ کر ملک کو سیاسی اور معاشی عدم استحکام سے نہیں نکالا جا سکتا اور اگر ملک کی سب سے بڑی جماعت کو توڑ مروڑ کر دھاندلی کے ذریعے انتخابات کرائے گئے تو اسکے نتائج مثبت نہیں ہونگے اور یہ کامیابی غیر حقیقی ہوگی۔ ہم شفاف انتخابات کے ایک ہی نقطے پر سیاسی مذاکرات چاہتے ہیں تاکہ ملک میں حقیقی اور جمہوری عمل کو استحکام مل سکے۔

انہوں نے کہا کہ پی ٹی آئی نے ملک بھر میں اپنے امیدوار کھڑے کرنے کی منصوبہ بندی کر لی ہے۔

یہ بھی پڑھنا مت بھولیں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button